اردوئے معلیٰ

Search

 

اللہ کی رحمت ہے تری چشمِ کرم اور

پوری ہو جب اک نعت تو کرتا ہوں رقم اور

 

تو شاہِ حرم، شاہِ عرب، شاہِ عجم اور

تیرا ہے خوشا عزّ و شرف جاہ و حشم اور

 

مٹ جاتا ہے غم ایک تو لاحق مجھے غم اور

چھینٹے ابھی رحمت کے ذرا ابرِ کرم اور

 

دونوں ہیں طرح دار کے ثانی نہیں جن کا

وہ صورتِ انور وہ ترا حسنِ شیئم اور

 

وحدت کی پلا دی ہے مگر اے مرے ساقی

جامِ مئے کوثر کا بھی ہو جائے کرم اور

 

قرآن کے جلووں سے منور ہے ہر اک راہ

رہبر ہے زمانے کو ترا نقشِ قدم اور

 

ایذاؤں کو طائف کی سنا اور نہ ہمدم

ہم سن نہیں سکتے انہیں اس رب کی قسم اور

 

دوڑیں گے یہ سب تیرے ہی میخانہ کی جانب

جب پیاس سے ہو جائے گی دنیا لبِ دم اور

 

عاصی ہوں وہی میں، ہو خطا بخش وہی تم

اس عرصۂ محشر میں بھی تم اور نہ ہم اور

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ