اردوئے معلیٰ

Search

بہ ہر صورت یہ دیکھا ہے کسی صورت زیاں پہنچا

نشیمن پایۂ تکمیل تک میرا کہاں پہنچا

 

پئے سجدہ جھکی جاتی ہے کیوں لوحِ جبیں اپنی

یہیں نزدیک اب شاید مقامِ آستاں پہنچا

 

ہمارے چار تنکوں کے نشیمن کا خدا حافظ

کہ اب صحنِ چمن تک شعلۂ برقِ تپاں پہنچا

 

سمجھ لے گا حقیقت سوزِ دل کی اے جفا پیشہ

کوئی نالہ جو تا حدِ فرازِ آسماں پہنچا

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ