اردوئے معلیٰ

Search

دل واقفِ اندازِ روایاتِ کہن ہے

اس بار مگر درد کا کچھ اور چلن ہے

 

مانا کہ تجھے عشق سے مطلب ہی نہیں ہے

کیا ہو کہ یہی خانماں برباد کا فن ہے

 

تو حسنِ مکمل ہے تو میں شاعرِ یکتاء

تو وجہِ سخن بن کہ فقط محوِ سخن ہے

 

تھا لمس ترا نرم بہت ، جھیل گیا ہوں

ویسے تو مجھے بوسہِ خوشبو بھی چبھن ہے

 

اک عمر ترے خواب کی سلوٹ کو سنوارا

اب یوں ہے کہ حالات کے ماتھے پہ شکن ہے

 

دل اب بھی لڑے جاتا ہے سنگلاخ زمیں سے

جیسے کہ ابھی ہاتھ میں وہ کانچ بدن ہے

 

میں ڈھانپ کے بیٹھا ہوں ترا خواب زمیں پر

ویسے مرے اطراف میں گھمسان کا رن ہے

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ