اردوئے معلیٰ

Search

ہیچ ہے عقلِ بشر فکرِ بشر ہے نا رسا

حقِّ توصیفِ نبی ایسے میں ہو کیسے ادا

 

پاک طینت، نرم خو، من موہنی ہر اک ادا

کم سخن، بالغ نظر، شیریں مقال و با حیا

 

صورتِ زیبا پہ اس کی حسنِ یوسف بھی نثار

سیرتِ اطہر کی خود تحسین فرمائے خدا

 

کوہِ فاراں پہ ہوا جو اوّلاً جلوہ فگن

چار سو پھیلی ہے اب اس ماہِ طیبہ کی ضیا

 

ہر طرف اقصائے عالم میں اسی کی ہے پکار

نامِ نامی کی فضا میں گونج ہے صبح و مسا

 

ہے انھیں کا ذکر ہِر پھِر کر یہ قرآنِ مبیں

یعنی قرآں ہے سراسر ذکرِ خیرِ مصطفیٰ

 

وہ مرادِ عاشقاں ہے وہ پناہِ عاصیاں

ذاتِ آں ختم الرسل لاریب سب کا منتہیٰ

 

وحی رب ماخذ ہو جس کے ہرسخن کا اے نظرؔ

حرفِ آخر کیوں نہ ہو پھر اس کا فرمایا ہوا

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ