اردوئے معلیٰ

Search

اب نوکِ زباں نعتِ رسولِ مدنی ہے

قربان لبوں پر مرے شیریں سخنی ہے

 

دندان مبارک ہے کہ دُرِّ عَدَنی ہے

اس زلف کی خوشبو ہے کہ مشکِ ختنی ہے

 

نوکِ مژۂ چشم وہ برچھی کی انی ہے

ابروئے خمیدہ وہ کماں جیسے تنی ہے

 

ہے دوش پہ کملی کبھی چادر یمنی ہے

حُسن آفریں ہر حال تری گُلبدنی ہے

 

خالق سے سرِ عرش بریں ہم سخنی ہے

کیا اوجِ شرف آپ کا اللہُ غنی ہے

 

اے صلِّ علیٰ سیرتِ اطہر ہے کہ قرآں

صورت وہ خوشا نور کے سانچے میں بنی ہے

 

اقصیٰ میں رسولانِ گرامی کی امامت

سردارِ رُسل آپ کو کہتے ہی بنی ہے

 

ظلمت کدۂ دہر میں پھیلا ہے اُجالا

نقشِ کفِ پا کی ترے جلوہ فگَنی ہے

 

سیرت کا یہ پہلو بھی طرحدار ہے کتنا

دی اس کو معافی کہ جو گردن زدنی ہے

 

رنگینیِ دنیا سے نظرؔ دل نہیں مسحور

غالب اثرِ رنگِ بہارِ مدنی ہے

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ