جب حِرا سے ہویدا ہوئی روشنی

جب حِرا سے ہویدا ہوئی روشنی

تِیرگی چیخ اٹھی ، روشنی روشنی

 

رحمتِ ہر دو عالم کا اعجاز ہے

خار، گُل بن گئے ، تِیرگی روشنی

 

آفتابِ جہاں تابِ پیغمبری

آپ کی روشنی ، دائمی روشنی

 

جنگِ بدر و اُحد کا خلاصہ ہے یہ

روشنی کو بچانے چلی روشنی

 

دینِ حق ہے تو بس ، آپ کا دین ہے

روشنی ہے تو بس آپ کی روشنی

 

تیرا منکر کہاں ، تیرا مومن کہاں

تِیرگی تِیرگی ، روشنی روشنی

 

تیری گفتار میں ، تیرے کردار میں

دل کشی ، حسنِ پاکیزگی ، روشنی

 

تیرے صدیق ، فاروق ، عثماں ، علی

روشنی ، روشنی ، روشنی ، روشنی

 

ظلمتوں کا کوئی داؤ چلتا نہیں

روز افزوں ہے اسلام کی روشنی

 

پَیروانِ محمد کی کیا بات ہے

زیست بھی روشنی ، موت بھی روشنی

 

نورِ قرآں بھی ہے ، نورِ سُنت بھی ہے

میرے گھر میں ہے زاہدؔ بڑی روشنی

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ