اردوئے معلیٰ

Search

جب سے کچھ ہوش سنبھالا ہے جبھی سے ہم کو

ہے شغف شکرِ خدا نعتِ نبی سے ہم کو

 

ہیں نبی جتنے عقیدت ہے سبھی سے ہم کو

حبّ لیکن ہے اسی مطّلبی سے ہم کو

 

راہ پر لائے ہیں بے راہ روی سے ہم کو

کیسے الفت نہ ہو شاہِ مدنی سے ہم کو

 

آگہی بخشی ہے ذاتِ ازلی سے ہم کو

اور آگاہ کیا سرِّ خودی سے ہم کو

 

دیں پسندیدۂ حق مصحفِ قرآنِ حکیم

سب ملا ہے کرمِ مصطفوی سے ہم کو

 

جب سے واللہ ترے فقر کی شاہی دیکھی

بے نیازی سی ہے اک شانِ کئی سے ہم کو

 

حوضِ کوثر سے ترے حشر میں ساغر پائیں

ہے توقع یہ تری دریا دلی سے ہم کو

 

خلدِ ارضی سے چلیں خلدِ بریں میں پہنچیں

موت لے جایے جو طیبہ کی گلی سے ہم کو

 

ہم بیاں کر نہیں سکتے ہیں جو کرنا چاہیں

فیض پہنچا جو تری جلوہ گری سے ہم کو

 

ایک اللہ کی چوکھٹ پہ کیا سر بسجود

دی نجات اس نے نظرؔ در بدری سے ہم کو

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ