اردوئے معلیٰ

Search

نعتِ شہِ دیں کا مجھے یارا تو نہیں ہے

چپ بیٹھ رہوں یہ بھی گوارا تو نہیں ہے

 

صدیوں سے ہزاروں نے لکھا وصفِ نبی پر

یکجا بھی کریں سب کو تو سارا تو نہیں ہے

 

چمکا رخِ ہستی ہے زِ انوارِ محمد

مہتابِ جہاں تاب ہے تارا تو نہیں ہے

 

انسان کے دکھ درد کبھی مٹ نہیں سکتے

بِن اس کی اطاعت کئے چارہ تو نہیں ہے

 

منظورِ نظر رب کا ہے ہر ایک پیمبر

پر اس کی طرح آنکھ کا تارا تو نہیں ہے

 

ہے قصۂ طائف کی سماعت سے گریزاں

پتھر کی طرح دل یہ ہمارا تو نہیں ہے

 

خوشنودی محبوبِ خداوندِ دو عالم

جاں دے کے ملے پھر بھی خسارا تو نہیں ہے

 

دامانِ نبی تھام لیا حشر میں ہم نے

بخشش کا کوئی اور سہارا تو نہیں ہے

 

سنگِ درِ اقدس سے اٹھاتا ہی نہیں سر

دیکھیں کہ نظرؔ عشق کا مارا تو نہیں ہے

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ