اردوئے معلیٰ

Search

 

جب تک نہ بڑھ کے خود ہی مشیت ہو دستگیر

عاجز ثنائے پاک سے ہے بندۂ حقیر

 

صورت حضورِ پاک کی رشکِ مہِ منیر

سیرت شہِ ہدیٰ کی ہے قرآن کی نظیر

 

رتبہ ترا بلند ہے شاہِ فلک سریر

شاہانِ زی حشم بھی ترے در کے ہیں فقیر

 

تخصیص کچھ نہیں کوئی مفلس ہو یا امیر

اس زلفِ تابدار کا سارا جہاں اسیر

 

دانتوں کی آب و تاب پہ دُرِّ عدن نثار

ابرو کماں کی طرح تو مژگاں ہیں مثلِ تیر

 

وہ آب و رنگِ عارضِ تابانِ مصطفیٰ

گلگونۂ شفق کہ ہے جیسے یہیں اسیر

 

واللہ مصطفیٰ کی یہ معجز بیانیاں

دلکش ہر ایک قول ہے تقریر دل پذیر

 

احسان مند کیوں نہ ہو دنیا حضور کی

بخشا بشر کو پرچمِ آزادی ضمیر

 

تا کشمکش کوئی رہے باقی نہ درمیاں

آجر سے استوار کیا رشتۂ اجیر

 

وہ مسئلے تمام کئے چٹکیوں میں حل

جن کو سمجھ چکا تھا یہ انسان ٹیڑھی کھیر

 

لاکھوں سلام پڑھئے گا بر آں گلیم پوش

جس نے کہ زیب تن نہ کیا اطلس و حریر

 

اس بارگاہِ قدس کی اللہ رے کشش

ہر گوشۂ جہاں سے چلے ہیں جوان و پیر

 

پرسانِ حال حشر میں کوئی نہ ہو گا جب

اس روز امتی کا وہی ہو گا دستگیر

 

وہ نور بھی بشر بھی بایں طور اے نظرؔ

روشن چراغ، خاک سے جس کا اٹھا خمیر

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ