اردوئے معلیٰ

Search

کہوں بات یہ میں تو بے جا نہیں ہے

نبی کوئی ختم الرسل سا نہیں ہے

 

ہزار انبیاء ایک سے ایک بڑھ کر

پہ کوئی سراجاً منیرا نہیں ہے

 

وہ ختمِ نبوت، امام انبیاء کے

علو مرتبت کوئی ان سا نہیں ہے

 

وہ خلقِ مجسم وہ رحمت سراپا

کوئی اور میرے نبی سا نہیں ہے

 

نقوشِ قدم اس کے عرشِ بریں پر

جہاں آج تک کوئی پہنچا نہیں ہے

 

ہے معراج کا واقعہ منفرد ہی

کسی اور قصہ سے ملتا نہیں ہے

 

تری بزم کے لوگ عقبیٰ کے طالب

کوئی ان میں دنیا کا بھوکا نہیں ہے

 

پلایا ہے وحدت کا ساغر جو اس نے

اتر جائے کیف اس کا ایسا نہیں ہے

 

لگی دل کو ہے آستانے پہ پہنچوں

مگر واپسی کی تمنا نہیں ہے

 

طرف دارِ امت وہی ایک ہو گا

نظرؔ کوئی جس دن کسی کا نہیں ہے

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ