اردوئے معلیٰ

Search

میں ہوں نغمہ سنجِ ثنائے نبی

مرے دل میں ہے موجزن سرخوشی

 

کسی بھی سخنور سے کب ہو سکی

ثنائے محمد کما ینبغی

 

زِ سر تا قدم عالمِ دلکشی

حسیں ہے وہ اپنی مثال آپ ہی

 

نہ پوچھیں کہ سیرت ہے کیا آپ کی

خوشا ہو بہو ہے وہ قرآن ہی

 

وہ آنکھیں ہیں مخمور من موہنی

جو دیکھے تو سرمست ہو آدمی

 

وہ مردِ مجاہد ، دلاور ، سخی

وہ مرتاض ، وہ پارسا ، متقی

 

وہ ہے نسلِ آدم سے ، ہے آدمی

پہ ہے اپنے رب کا وہ پیارا نبی

 

بلا شک ہیں آئے ہزاروں نبی

محمد کی ہے شان پر اور ہی

 

مٹی اس کی آمد سے تیرہ شبی

اسی کی بدولت ہے سب روشنی

 

بتائے ہیں جتنے بھی امر و نہی

بجا لائے انساں اگر با خوشی

 

بدل جائے پھر نقشۂ زندگی

سنور جائے بگڑا ہوا آدمی

 

خوشا ان کے مصحف سے ہم کو ملی

خدا آگہی اور خود آگہی

 

شجاعت میں ان سے ہے نامِ علیؓ

انہیں کی بدولت ہے عثماںؓ غنی

 

تھے صدیقؓ و فاروقؓ ان کے ولی

ہیں تربت میں تینوں اکٹھا یونہی

 

نبوت کے منسب کا وہ مختتم

رسالت ہوئی آپ پر منتہی

 

تمام اہلِ محفل کا ساقی ہے وہ

پلائی خمستانِ توحید کی

 

اسی کی شریعت سکھائے ہمیں

عبادت ، ادب ، طہر ، پاکیزگی

 

سرِ عرش پہنچے بہ نفسِ نفیس

شرف آپ کا سوچئے تو سہی

 

یہ فضلِ خدا ہے وہ جس پر بھی ہو

ہے سب انبیاء پر اسے برتری

 

حدیثوں پہ کر لے عمل استوار

اگر چاہئے زندگی سکھ بھری

 

نگاہِ کرم ہو مرے ساقیا

نظرؔ کا بھی بھر جائے جامِ تہی

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ