اردوئے معلیٰ

Search

میں نے جب شعر ترے درد میں ڈھالے آخر

پڑ گئے شعر کو بھی جان کے لالے آخر

 

شدتِ کرب سے کھنچتی ہیں رگیں ٹوٹتی ہیں

اس قدر ضبط مجھے مار نہ ڈالے آخر

 

مشورہ ہے کہ مرے درد کا درماں سوچو

اس سے پہلے کہ مجھے موت منالے آخر

 

خود کشی عین مناسب ہے مرے چارہ گرو

موت آئے تو کہاں تک کوئی ٹالے آخر

 

میں تجھے ڈھانپ کے ٹھہرا رہا میدان میں اور

میرے حلقوم تلک آ گئے بھالے آخر

 

کوئی توجیہہ نہیں تیری جفا کی ملتی

پڑ گئے سوچ کے پاؤں میں بھی چھالے آخر

 

قید کہتا ہے پناہوں کو مری جان تو سن

کر دیا میں نے تجھے تیرے حوالے آخر

 

تو کہ آزاد ہے اب شہرِ ہوس میں ناصر

مر گئے آج ترے چاہنے والے آخر

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ