اردوئے معلیٰ

Search

مدحت سرا ہوں تا خلشِ غم ہو جاں سے دور

توصیف ان کی یوں تو ہے حدِ بیاں سے دور

 

یہ خاکسار یوں ہے ترے آستاں سے دور

پیاسی زمیں ہے جیسے کہ ابرِ رواں سے دور

 

وہ جلوہ گاہِ ناز ہو چاہے جہاں سے دور

ہرگز نہیں مگر نگہِ عاشقاں سے دور

 

اس بزمِ خاکداں سے پرے آسماں سے دور

اک شب گئے حضور زمان و مکاں سے دور

 

آنکھوں سے دور ہو تو ہے اک سوءِ اتفاق

ہونا کہیں نہ تم مرے دل کے جہاں سے دور

 

پیشِ حضور کیسے کروں عرض داستاں

ہر کیف داستاں ہے مری داستاں سے دور

 

امت ہوئی ہے دور عبادت کے ذوق سے

صوم و صلوٰۃ و حج و زکوٰۃ و اذاں سے دور

 

مستِ شراب و عیش و طرب ہو کے رہ گیا

خوفِ خدا تو اب ہے دلِ مسلماں سے دور

 

ایماں کی شاہ رگ ہے رگِ دل سے اب جدا

سرخی حیا کی ہے نگہِ گل رخاں سے دور

 

گم گشتہ راہ ہو کے رہے اہلِ کارواں

خود میرِ کارواں کہ رہے کارواں سے دور

 

رنگِ چمن پلٹ نہ سکا دل نہ کھِل سکا

موسم خزاں کا ہو نہ سکا گلستاں سے دور

 

محشر میں بھول جائیں وہ تجھ کو غلط غلط

یہ بات ہے نظرؔ شہِ رحمت نشاں سے دور

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ