اردوئے معلیٰ

Search

 

نگاہِ خلق و نگاہِ خدا گواہ بنے

میں کہہ رہا ہوں کہ وہ مرکزِ نگاہ بنے

 

جہاں پناہ بنے اور کج کلاہ بنے

غلام ان کے، زمانے کے سربراہ بنے

 

وہ ذاتِ پاک جو مہمانِ عرشِ اعظم ہو

نہ کیوں نشانِ شرف رشکِ عزّ و جاہ بنے

 

ہیں آسمانِ نبوت کے انبیاء مہتاب

خدا کے فضل سے لیکن وہ رشکِ ماہ بنے

 

خبر انہیں سے ملی لا الٰہ الّا اللہ

وگرنہ پہلے تو بت بھی مرے الٰہ بنے

 

تلاشِ جادہ و منزل کی کیا مجھے تکلیف

نقوشِ پائے مبارک چراغِ راہ بنے

 

ترے اشارۂ ابرو پہ جائیے قرباں

قدم قدم پہ مجھے مانعِ گناہ بنے

 

اسی کے دامنِ رحمت میں ہے جہاں کا سکوں

بروزِ حشر بھی جو دامنِ پناہ بنے

 

میں منتظر ہوں نظرؔ اس گھڑی کا اس دن کا

بہ سمتِ کوئے مدینہ سفر کی راہ بنے

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ