اردوئے معلیٰ

Search

ساتھ میرے عیدِ قرباں پر جو گزرا سانحہ

میں سناتا ہوں ذرا تفصیل سے وہ واقعہ

 

تھی جو نیت گاؤ نر میں عید پر قرباں کروں

تاکہ حاصل اس طرح خوشنودی یزداں کروں

 

جا کے پنڈی میں خریدا جانور اک فربہ تن

جلد کو چمکا رہی تھی جس کے سورج کی کرن

 

جانور تھے سیکڑوں وہ سیکڑوں میں ایک تھا

خورد سال و خوبصورت اور بظاہر نیک تھا

 

الغرض اس کو خریدا صرف کر کے دو ہزار

باغِ سرداراں سے گھر تک وہ نہ بدکا ایک بار

 

لان میں باندھا گیا وہ گھاس چرنے کے لئے

بالٹی پانی کی رکھی تاکہ وہ پانی پئے

 

منہ لگایا گھاس کو اس نے نہ پانی ہی پیا

دوپہر سے شام تک بھوکا پیاسا وہ رہا

 

قیدِ تنہائی پہ اپنی تھا وہ بے حد بد حواس

سلبِ آزادی پہ اپنے تھا اسے خوف و ہراس

 

آہنی پھاٹک کی جانب دیکھتا تھا بار بار

مضطرب تھا وہ کسی عنواں ملے راہِ فرار

 

بعد کچھ وقفہ کے دیکھا دھوپ کی زد میں اسے

میں نے سوچا باندھ دوں اب سایہ کی حد میں اسے

 

پاس سے گزرا تو بڑھ کر میری جانب ” فُوں ” کیا

میں یہ سمجھا جانور ہے عادتاً ہی یوں کیا

 

کھول دی رسّی تو پھر منظر ہوا نادیدنی

تل گیا وہ کام کرنے جو کہ تھا نا کردنی

 

جارحانہ وحشیانہ جنگ جویانہ بڑھا

جان کر مجھ کو حریف اپنا حریفانہ بڑھا

 

نیک خو سمجھے تھے ہم پر وہ تو نکلا بد نہاد

ڈھیل پا کر ہو گیا آمادۂ شر نا مراد

 

اس کی ٹکر سے گرا چت بے دھڑک میں لان پر

ہوش پرّاں تھے مرے اور بن گئی تھی جان پر

 

پھر بڑھا وہ دوسری ٹکر لگانے کے لئے

دستِ غیبی آ گیا آڑے بچانے کے لئے

 

سینگ دونوں رک گئے آ کر مری پسلی کے پاس

میں کہ تھا در عالمِ بے چارگی و حزن و یاس

 

پوری قوت مجتمع کر کے ہوا اٹھ کر کھڑا

تیسری ٹکر لگانے مجھے کو ظالم پھر بڑھا

 

ہو گیا مجھ کو یقیں ہرگز نہ چھوڑے گا مجھے

روند ڈالے گا یہ ظالم آج زیرِ پا مجھے

 

شور پوتے نے مچایا آ گیا بیٹا مرا

آتے ہی اس کو رسید اک زور کا ڈنڈا کیا

 

میری جانب سے مڑا اور اس کی جانب منہ کیا

اس کو اک ٹکر لگانے کے لئے آگے بڑھا

 

مل گیا موقع غنیمت اٹھ کے بھاگا بے تکاں

گھس گیا گھر میں گلے آ کر ملی عمرِ رواں

 

آ گئی تھی سر پہ لیکن ٹل گئی میری قضا

دو نفل میں نے پڑھے اور بعدہٗ صدقہ دیا

 

بچ گیا کیسے مگر مجھ پر کھلا یہ بعد میں

گیارھویں آیت پڑھی جب سورۂ الرعد میں

 

کچھ فرشتے ہیں مقرر پیش و پس انسان کے

جو محافظ حکمِ رب سے ہیں ہر اک کی جان کے

 

جانور سرکش اگر ہو موت کا پروانہ ہے

یہ نصیحت سن لے میری جو کوئی فرزانہ ہے

 

دل میں ٹھانی ہے نظرؔ میں نے گر آئندہ جیوں

عیدِ قرباں پر میں قرباں جانور چھوٹا کروں

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ