اب کے لبوں پہ زرد ، تو آنکھوں میں لال بھر

اب کے لبوں پہ زرد ، تو آنکھوں میں لال بھر

تصویر میں بھی رنگ مرے حسبِ حال بھر

 

میرے شفق نگار، سلامت ہو مُو قلم

میں ڈوبنے لگوں تو افق میں گلال بھر

 

تو معترض جنوں کی تہی دامنی کا تھا

دامانِ عقل و ہوش میں جا کر سوال بھر

 

کیا پانچواں بھی ہے کوئی موسم ، خبر کرو

کس رُت کی ہے تلاش کہ رہتی ہے سال بھر

 

خاکہ سا رہ گیا ہوں سرِ ورقِ آرزو

پھر ایک بار مجھ میں کوئی خد وخال بھر

 

اک آخری زقند، مرے آہُوئے جنوں

اک آخری اڑان، شکستہ خیال بھر

 

کیا آسمان صرف یہی طشتِ زرد ہے

گویا کہ کہکشاں میں ستارے ہیں تھال بھر

 

بانہوں میں بھر مجھے کہ فرشتہ نہیں ہوں میں

یہ خاکداں ہے خاک سے جامِ سفال بھر

 

ہے منتظر فقیر ، کہ اذنِ سفر ملے

یوں بھی گیا ہے کاسہِ ہجر و وصال بھر

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ