اردوئے معلیٰ

الٰہی تو ہے کردگارِ جہاں

دو عالم میں ہے سکہ تیرا رواں

 

سرِ فرش سے عرش تک بے گماں

برابر ہے تجھ پر عیاں و نہاں

 

ہزاروں طرح کے چمن در چمن

کھلاتا ہے تُو لالہ و یاسمن

 

نسیمِ سحر کو تری آرزو

پھراتی ہے شام و سحر چار سُو

 

اُگائے ہزاروں طرح کے شجر

دیے سبز و شاداب برگ و ثمر

 

ترا کفو کوئی نہ خلقت سے تُو

بری ہے اب وجد کی تہمت سے تُو

 

مہ و آفتاب و زمین و فلک

پری زاد و انسان و حور و ملک

 

تو بینا ہے بے چشم و نورِ بصر

سبب سے مُبرا ہے شام و سحر

 

گلستانِ عالم میں لیل و نہار

دکھاتا ہے رنگِ خزاں و بہار

 

رولاتا ہے شبنم کو تُو رات بھر

ہنساتا ہے غنچوں کو وقتِ سحر

 

کیا ہے کچھ اس رنگ سے رازداں

کہ خاموش ہے سوسن زدہ زباں

 

ہر اک لذت و رنگ و بُو میں جُدا

اثر کا وہ عالم کہ صلِ علیٰ

 

یہ جو کچھ ہے پیشِ نظر جلوہ گر

طلسمِ شب و روز شام و سحر

 

یہ سب تیری قدرت سے پیدا ہوئے

نہاں و عیاں آشکارا ہوئے

 

ہر اک کو بڑے حسنِ دل خواہ سے

تُو لایا جہاں میں عدم گاہ سے

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ

اردوئے معلیٰ

پر

خوش آمدید!

گوشے۔۔۔

حالیہ اشاعتیں

اشتہارات

اشتہارات