اک چشمِ کرم ، شاہِ اُمم ، سیّدِ لولاک !

 

!اک چشمِ کرم ، شاہِ اُمم ، سیّدِ لولاک

!آئے ہیں بڑی دور سے ہم سیّدِ لولاک

 

ہیں زیرِ نگیں آپ کے سب ارض و سماوات

!اے شاہِ عرب ، شاہِ عجم ، سیّدِ لولاک

 

اللہ کے بعد آپ کا رتبہ ہے مسلّم

!اے خیرِ رُسُل ، خیرِ اُمم ، سیّدِ لولاک

 

تاریکی نے ظلمت نے ہمیں گھیر لیا ہے

!لللہ کرم ، چشمِ کرم ، سیّدِ لولاک

 

اے کشتیِ امت کے نگہبان ! کرم کر

!اُمّت ہے تری غرقِ ستم ، سیّدِ لولاک

 

دربار کہاں تیرا کہاں ننگِ جہاں میں

!لرزیدہ بدن ، آنکھ ہے نم ، سیّدِ لولاک

 

پھر مانگ ،ارے مانگ ، ارے مانگ ، ارے مانگ

!ہر لحظہ ہیں مائل بہ کرم ، سیّدِ لولاک

 

حاضر ہوں سلامی کو کسی روز ہم آقا

!کر دیجیے اسباب بہم ، سیّدِ لولاک

 

!سرکار سے سرکار کو تُو مانگ لے دانش

!پھیلائے ہیں دامانِ کرم سیّدِ لولاک

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
Share on facebook
Share on twitter
Share on whatsapp
Share on telegram
Share on email
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ

اردوئے معلیٰ

پر

خوش آمدید!

گوشے

متعلقہ اشاعتیں

جو مجھ سے خطا کار و زیاں کار بھی ہوں گے
اے ختمِ رسل نورِ خدا شاہِ مدینہ
ان کا نہیں ہے ثانی نہ ماضی نہ حال میں
امکانِ حرف و صوت کو حیرت میں باندھ کر
وجودِ شوق پہ اک سائباں ہے نخلِ درود
میں ، مری آنکھیں ، تمنائے زیارت ، روشنی
نبی اکرمؐ شفیع اعظمؐ دکھے دلوں کا پیام لے لو
آنکھ گنبد پہ جب جمی ہوگی
جب چھڑا تذکرہ میرے سرکار کا میرے دل میں نہاں پھول کھلنے لگے
صبح بھی آپؐ سے شام بھی آپؐ سے