اردوئے معلیٰ

Search

اے فاتحِ اَقفالِ درِ غیب و حضوری

قفلِ درِ وصلت بھی کھلے ، دور ہو دوری

 

ہے تا بہ کجا قسمتِ پروانہ میں جلنا ؟

اے شمعِ فروزاں سرِ تمدیحِ غَفوری

 

ہے سارے عناصر کو ملا حصّۂ رحمت

آبی ہوں کہ خاکی ہوں کہ ناری ہوں کہ نوری

 

مختارِ مکانات و زمانہ کے کرم سے

عُجلت سے اُگا اور پکا باغِ کھجوری

 

ہے قوّتِ مردانِ خداوند تِرا ہاتھ

اور خاکِ کفِ پا ہے تِری غازۂِ حُوری

 

اے آں ! کہ مطافِ مہ و مہر و صفِ انجم

ہے ذات تِری قبلۂ بَرِّی و بحوری

 

موسائے تعقّل کو کِیا خضرِ رہِ فَوز

اللہ رے تری تربیتِ بطن و ظہوری

 

یوں لقمۂِ تر تو نے غلاموں کو کِھلایا

ماں جیسے کِھلائے کوئی اولاد کو چُوری

 

سب تیری فقاہت کے سمندر کا ہیں قطرہ

ہوں چاروں ائمہ کہ ہوں شامی کہ قدوری

 

قطرے کا بھی یہ قول ہے بس بہرِ تمثل

ورنہ تو ہے مابین زمانوں کی سی دوری

 

اِک باغ کے سب پھول ہیں ،گو رنگ الگ ہیں

استادِ زمن ہوں کہ معظمؔ ہو کہ نوری

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ