اردوئے معلیٰ

اے مصور جو مری تصویر کھینچ

حسرت آگیں غمزدہ دلگیر کھینچ

 

جذب بھی کچھ اے تصور چاہئے

خود کھنچے جس شوخ کی تصویر کھینچ

 

اے محبت داغ دل مرجھا نہ جائیں

عطر ان پھولوں کا بے تاخیر کھینچ

 

آ بتوں میں دیکھ زاہد شان حق

دیر میں چل نعرۂ تکبیر کھینچ

 

ایک ساغر پی کے بوڑھا ہو جوان

وہ شراب اے مے کدہ کے پیر کھینچ

 

دل نہ اس بت کا دکھے کہتا ہے عشق

کھینچ جو نالہ وہ بے تاثیر کھینچ

 

دل ادھر بیتاب ہے ترکش ادھر

کھینچتا ہوں آہ میں تو تیر کھینچ

 

کچھ تو کام آ ہجر میں او اضطراب

شوخیٔ محبوب کی تصویر کھینچ

 

قیس سے دشت جنوں میں کہہ جلالؔ

آگے آگے چل مرے زنجیر کھینچ

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ

اردوئے معلیٰ

پر

خوش آمدید!

گوشے۔۔۔

حالیہ اشاعتیں

اشتہارات

اشتہارات