اردوئے معلیٰ

بے دلی سے ہنسنے کو خوش دلی نہ سمجھا جائے

بے دلی سے ہنسنے کو خوش دلی نہ سمجھا جائے

غم سے جلتے چہروں کو روشنی نہ سمجھا جائے

 

گاہ گاہ وحشت میں گھر کی سمت جاتا ہوں

اس کو دشتِ حیرت سے واپسی نہ سمجھا جائے

 

خاک کرنے والوں کی کیا عجیب خواہش تھی

خاک ہونے والوں کو خاک بھی نہ سمجھا جائے

 

ہم تو بس یہ کہتے ہیں روز جینے مرنے کو

آپ چاہے کچھ سمجھیں زندگی نہ سمجھا جائے

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ