اردوئے معلیٰ

Search

تا حشر سرخرو ہیں کسی کی نظر سے ہم

خیر الامم ہیں نسبت خیر البشر سے ہم

 

پا بوسی رسول سے جو سرفراز ہے

گزرے تصورات میں اس رہگذر سے ہم

 

کیا شان التفات پیمبر سے جس کے بعد

ہیں بے نیاز دہر کے چارہ گر سے ہم

 

ہم بے کسوں پہ آپ کی رحمت ہے بیشتر

کم تر نہیں جہاں میں کسی تاجور سے ہم

 

آلام روزگار سے دامن پہ جو گر

عشق نبی میں ہیں خجل اس اشک تر سے ہم

 

لے جا اڑا کے طیبہ کی جانب ہوائے شوق

ہیں عرصہ حیات میں بے بال و پر سے ہم

 

جان فقیر مست و دام حضور ہے

رکنے نہ پائے جسم کے دیوار و در سے ہم

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ