شکوہ گزارِ چرخ ستمگر نہیں ہوں میں ​

شکوہ گزارِ چرخ ستمگر نہیں ہوں میں ​

سرکاؐر کا کرم ہے کہ مضطر نہیں ہوں میں​

​ 

شہرِ جمال میں بھی نہ اڑ پاؤں تیرے ساتھ​

موجِ ہوا ! اب ایسا بھی بے پر نہیں ہوں میں ​

​​ 

طیبہ کے دشت و راغ بھی جنت بدوش ہیں ​

منّت پذیرِ گنبدِ بے در نہیں ہوں میں ​

​​ 

صد شکر میں گدائے شہِ مشرقین ہوں ​

دارا و کیقیا و سکندر نہیں ہوں میں ​

​ 

مجھ کو درِ حضوؐر سے دوری کا رنج ہے​

آلامِ روزگار کا خوگر نہیں ہوں میں ​

​​ 

مجھ سے گریز پا ہیں زمانے کی ٹھوکریں ​

آقاؐ ! کسی کی راہ کا پتھر نہیں ہوں میں​

​ 

مال و متاعِ عشقِ محمد ہے میرے پاس ​

یہ کس نے کہہ دیا کہ تونگر نہیں ہوں میں​

​​ 

روشن ہے نورِ عشقِ محمد سے میرا دل​

پامالِ جلوہء مہ و اختر نہیں ہوں میں ​

​​ 

آقا کے در پہ ہے سرِ تسلیمِ خم ایاز ​

اللہ جانتا ہے کہ خود سر نہیں ہوں میں​

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
Share on facebook
Share on twitter
Share on whatsapp
Share on telegram
Share on email

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ

اردوئے معلیٰ

پر

خوش آمدید!

گوشے

متعلقہ اشاعتیں

کہوں میں نعت نبی اور گنگناؤں اُسے
قبلہ کا بھی کعبہ رُخِ نیکو نظر آیا
کچھ غم نہیں اگرچہ زمانہ ہو بر خلاف
باغِ جنت میں نرالی چمن آرائی ہے
محبت ہو نہیں سکتی خُدا سے
نبیؐ اللہ کا مُجھ پر کرم ہے
مرے محبوبؐ، محبوبِ خُداؐ ہیں
دل و جاں میں سمایا نقشِ پا خیر الوریٰؐ کا ہے
غریبوں کا واحد سہارا محمد
وفورِ خیر تھا ، سو عرضِ حال بھُول گیا

اشتہارات