اردو معلی copy
(ہمارا نصب العین ، ادب اثاثہ کا تحفظ)

قادرِ مطلق

ھوالاول، ھوالآخر، ھوالظاہر، ھوالباطن

خدائے لا یموت و لم یزل وہ ہے

وہی ہے المصوّر، المھیمن

وہی جبّار و قھّار و سلام و حیّ و قیّوم

وہی ہے عالم الغیب و شھادہ

رعونت، خودسری، شرک و جہالت حکمراں جب بھی ہوئی ہے

ہوا مجروح جب سینہ تقدس کا کبھی سنگِ ملامت سے

نکالا اس نے ہی فاسد لہو تہذیب کی رگ سے

ثمود و عاد کو، اصحابِ مدین کو

کبھی اصحابِ رس، اصحابِ ایکہ کو

کیا نابود و دنیا سے

دکھاتا ہے کبھی وہ اپنی قدرت کو عصا دے کر

ڈبوتا ہے بنا کر راستہ وہ نیل میں مغرور و سرکش کو

پلٹ دیتا ہے دھرتی کو

الٹ دیتا ہے بستی کو

کچلتا ہے کبھی وہ سر حنین و بدر میں فرعونیت کا اپنی قدرت سے

کبھی وہ ماسکو سے لندن و پیرس کے ٹاور تک

عراق و شام سے افغان و پاکستان و بھارت تک

وہ پنٹاگون سے ارضِ فلسطیں تک

اسی انداز سے تہدید کرتا ہے

ذرا سوچو

وہی ہے قادرِ مطلق

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
Share on facebook
Share on twitter
Share on whatsapp
Share on telegram
Share on email
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ

اردوئے معلیٰ

پر

خوش آمدید!

گوشے

متعلقہ اشاعتیں

تو ہے مشکل کشا، اے خدا، اے خدا
تو ہست تو ہی بود، تیری ذات لاشریک ​
کر رہے ہیں تیری ثناء خوانی
زباں پر حمدِ باری ہے مرے آنسو نہیں تھمتے
خداوندِ جہاں، آقا و مولا
خدا الطاف فرما، مہرباں ہے
ہے یہ حکمت خدائے عزوجل کی
کرو آدم کو سجدہ، جب فرشتوں کو یہ فرمایا خدا نے
خدا بندے کی شہ رگ سے قریں ہے
خدائے پاک ربّ العالمیں ہے