قوسِ قزح میں لفظ بنوں نعت میں کہوں

 

قوسِ قزح میں لفظ بنوں نعت میں کہوں

کچھ نور نور حرف کہوں نعت میں کہوں

 

حسن و جمالِ کل ہیں وہ تمثیل سے ورا

قرآن بہرِ مدح پڑھوں نعت میں کہوں

 

بہرِ کرم جو جلوہ نما حشر میں وہ ہوں

الفت میں ان کی جھوم اٹھوں نعت میں کہوں

 

کاش آئے میرے نام پہ بھی اذن اور میں

ہم راہ مرشدی کے چلوں نعت میں کہوں

 

گوشہ بہ گوشہ کو بہ کو ہے نورِ لم یزل

پلکوں سے خاکِ طیبہ چنوں نعت میں کہوں

 

منکر نکیر مجھ سے سوالات جب کریں

ان پر درود پڑھتا اٹھوں نعت میں کہوں

 

نعلینِ فیض بار میں آنکھوں سے یوں لگاؤں

ہو بیخودی و کیف و جنوں نعت میں کہوں

 

لاکھوں سلام سرورِ عالم کی آل پر

صبح و مسا میں پڑھتا رہوں نعت میں کہوں

 

آٹھوں پہر ہے منظرِؔ طیبہ سجا ہوا

مقصودِ لحن نعت رکھوں نعت میں کہوں

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ