اردوئے معلیٰ

Search

لَو چراغوں کی بہت کم ہے خدا خیر کرے

بادِ صرصر بڑی برہم ہے خدا خیر کرے

 

سرِ تکیہ کوئی ہمدم بھی نہیں آج کی شب

آج تو درد بھی پیہم ہے خدا خیر کرے

 

لذّتِ دردِ نہاں سے نہیں واقف جو ذرا

وہ مرا چارہ گرِ غم ہے خدا خیر کرے

 

خوئے لغزش بھی نہیں جاتی مرے رہبر کی

جادۂ راہ بھی پُرخم ہے خدا خیر کرے

 

جانے اغیار کی سازش ہے یا اپنوں کا ستم

شہر یاراں کا جو عالَم ہے خدا خیر کرے

 

کوئے قاتل کی رہی ہے جو کبھی خاک ظہیرؔ

وہ مرے زخم کا مرہم ہے خدا خیر کرے

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ