اردوئے معلیٰ

Search

 

مرسلوں میں کوئی بھی خیر البشر ایسا نہ تھا

مرتبہ ان سب کا اعلیٰ تھا مگر ایسا نہ تھا

 

نام جب سرکار کا جپتا نہ تھا ہر صبح میں

روز ہوتی تھی سحر حسن سحر ایسا نہ تھا

 

لامکاں کی حد سے آگے ختم ہوتا ہے سفر

سدرہ سے آگے بھی جاتا ہمسفر ایسا نہ تھا

 

جا نہ سکتا جو تلاش رزق میں طیبہ تلک

طائر تخیل میرا خستہ پر ایسا نہ تھا

 

داغ انگلی کے اشارے کا ہے سینے پر عیاں

آپ کے اعجاز سے پہلے قمر ایسا نہ تھا

 

نعت کہتا ہوں تو اطمینان خاطر ہے نصیب

قبل ازیں ہر لمحہ شام و سحر ایسا نہ تھا

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ