اردوئے معلیٰ

Search

مرے لب پہ ہے جو تری ثنا، تری شان جل جلال ہے

یہ جو کائنات کا حسن ہے ترے نور ہی کا جمال ہے

 

کریں حمد تیری شجر حجر ترے ماتحت ہیں یہ بحروبر

مہ و مہر تجھ سے ہیں بہرہ ور ، تیری مثل ہے نہ مثال ہے

 

تیری شان جل جلال ہے

 

ہے ستاروں میں تری روشنی ہے فلک پہ تیری ردا تنی

ترے حکم سے ہی زمیں بنی ترے کُن کا سارا کمال ہے

 

تیری شان جل جلال ہے

 

ہے گلوں میں صرف تری مہک، ہے کلی کلی میں تری چٹک

سبھی موتیوں میں تری چمک کہ تو ماورائے زوال ہے

 

تیری شان جل جلال ہے

 

یہ جورنگِ لیل و نہار ہے تری روشنی کی بہارہے

تو رخِ چمن کا نکھار ہے ترے وصف گننا محال ہے

 

تیری شان جل جلال ہے

 

یہ ہے ناز ادنیٰ کی التجا مجھے ہے فقط ترا آسرا

کبھی سُن، ہے میری یہی دُعا مری چاہ تیرا وصال ہے

 

تیری شان جل جلال ہے

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ