کرتا ہے گلِ خلد کی شبنم سے لب کو تر

کرتا ہے گلِ خلد کی شبنم سے لب کو تر

جب چومتا ہے پیارِ سے کوئی نبیؐ کا در

 

عزت حروف نسبتِ احمدؐ سے پا گئے

شامل ہوئے جو نعت میں وہ ہوگئے امر

 

ہیں جاں نثار یار سبھی آپؐ کے حضورؐ

عثمان ہوں علی ہوں یا صدیق اور عمر

 

کب پا رہا ہے نعت نبیؐ کا نمو خیال

ہر لحمہ ذوق و شوق سے دل رکھتا ہے خبر

 

آتے ہیں جو پرندے مدینہ کے شہر سے

احوال ان سے پوچھتے رہتے ہیں سب شجر

 

سورج نے ان کے نور سے پائی ہے روشنی

سرکارؐ کی ضیا سے چمکتا ہے یہ قمر

 

سرکارؐ کا کرم ہے کہ ہوتی ہے ان کی نعت

بندہ تو خود سے کچھ نہیں بے کار و بے ہنر

 

سب سے عظیم تر ہیں عطا وہ خدا کے بعد

ہیں وجہِ کائنات کریں بات مختصر

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
Share on facebook
Share on twitter
Share on whatsapp
Share on telegram
Share on email
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ

اردوئے معلیٰ

پر

خوش آمدید!

گوشے

متعلقہ اشاعتیں

بڑا احسان ہےمجھ پرخدا کا
یہ اُمّتی ناچیز ہو، دربارِ نبی ہو
مومن وہی ہے ان سے جو عہد وفا کرے
مجھے نعت نے شادمانی میں رکھا
آپ سے پہلے جہانِ خشک و تر کچھ اور تھا
تجھ سے ہے بہار جانِ عالم
پیام لائی ہے باد صبا مدینے سے
تو شاہِ خوباں، تو جانِ جاناں، ہے چہرہ اُم الکتاب تیرا
یادِ نبیؐ میں گم ہو جانا کتنا اچھا لگتا ہے
محبوب خدا احمد مختار کی صورت