اردوئے معلیٰ

Search

یہ خاکداں پہ جو رخشاں ہے شمع دانِ شرَف

شرَف نواز ! یہ تیرا ہے آستانِ شرَف

 

ہے ثبت عالَمِ امکاں پہ معنئ ذِکرَک

بیانِ وصفِ پیمبر ہے کُل بیانِ شرَف

 

مدینہ یوں کفِ دستِ زمیں پہ ہے منقوش

کہ جیسے خاک پہ چمکا ہو آسمانِ شرَف

 

اُسی کے نقش ہویدا رہیں گے تا بہ ابد

ترے جلو میں چلا تھا جو کاروانِ شرَف

 

علوِ عظمت و رفعت کا استعارہ ہیں

تری زمینِ مقدس ، ترا زمانِ شرَف

 

تری ہی درگہِ عالی ہے والئ دل و جاں

کفیلِ جملہ کفیلاں ہے تیرا خوانِ شرَف

 

تری عطا سے ثنا بیز ہے سبیلِ سخن

ترے کرم سے نمو یاب ہے جہانِ شرَف

 

طرَب فزود ہے شہرِ عطا میں موسمِ گُل

کِھلا ہُوا ہے بصد رنگ گُلتسانِ شرَف

 

ورودِ اسمِ محمد ہے زندگی مقصودؔ

یہی تو ورد ہے لا ریب وجۂ شانِ شرَف

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ