اردوئے معلیٰ

Search

لکھتا ہوں محمدت کہ خدا دستگیر ہے

مولائے بندگاں ہے وہ نعم النصیر ہے

 

ختم الرسل ہے اہلِ جہاں کو نذیر ہے

اللہ کا نبی ہے بشر ہے بشیر ہے

 

محبوبِ ذاتِ حق ہے وہ روشن ضمیر ہے

نورِ ہدیٰ ہے اور سراجِ منیر ہے

 

کمخواب ہے نہ تن پہ لباسِ حریر ہے

کملی میں مست وہ شہِ گردوں سریر ہے

 

وہ فرق تا قدم ہے مطافِ کمالِ حسن

خلقِ عظیم اس کا کتابِ منیر ہے

 

رکھتا نہیں وہ کچھ بھی بجز قُوتِ لا یموت

اس کی غذا کھجور ہے نانِ شعیر ہے

 

روشن نقوشِ پا سے ہے ہر منزلِ حیات

مامون گمرہی سے ہر اک راہ گیر ہے

 

وہ افصح العرب ہے کلام اس کا مرحبا

واضح، بلیغ اور عدیم النظیر ہے

 

پروانہ ہائے شمع رسالت ہیں خوش نصیب

ان میں ہر ایک فائزِ فوزِ کبیر ہے

 

ہے مرجعِ انام کہ محبوبِ رب ہے وہ

آقائے خاص و عام و غریب و امیر ہے

 

دیدارِ روضۂ نبوی کو رواں دواں

اطرافِ روزگار سے جمِ غفیر ہے

 

ہر فکرِ اخروی سے وہ آزاد ہے نظرؔ

جو زلفِ تابدار کا ان کی اسیر ہے

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ