اردوئے معلیٰ

Search

مہرباں مجھ پہ مرا جب کہ خدا ہو جائے

اس کے محبوب کی اک تازہ ثنا ہو جائے

 

دل اگر اس کے تصور سے جدا ہو جائے

خوف آتا ہے کہ جانے مجھے کیا ہو جائے

 

قیدِ ہستی سے مرا دل جو رہا ہو جائے

خاک بن کر ترے کوچہ کی ہوا ہو جائے

 

دن میں رہتا ہے وہ مصروفِ جہادِ حق میں

رات آتے ہی وہ مشغولِ دعا ہو جائے

 

زلفِ پیچاں کے اسیر اس کے بہت ہیں خرسند

آرزو مند نہیں کوئی رہا ہو جائے

 

اے مرے ساقی گلفام ترے قرباں میں

ساغرِ کوثر و تسنیم عطا ہو جائے

 

اس کی انگلی کے اشارے سے ہے مہتاب دو نیم

آنکھ کا ہو تو قیامت ہی بپا ہو جائے

 

جان پڑتی ہے شفاعت کے تصور سے ترے

دھیان سے حشر کے جب روح فنا ہو جائے

 

روزِ محشر ہو شفاعت مرے حق میں آقا

کر دے میرا بھی بھلا تیرا بھلا ہو جائے

 

رونقِ بزم دوبالا ہو یہ دیکھا ہم نے

بزم میں جب بھی نظرؔ نعت سرا ہو جائے

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ