اردوئے معلیٰ

Search

لوٹتا ہوں مدحتِ شاہِ مدینہ کے مزے

عمر تا آخر مری یا رب اسی صورت کٹے

 

پیکر اپنی رحمتوں کا ڈھال کر اللہ نے

ابنِ عبد اللہ بھیجا اپنے بندوں کے لئے

 

کج روی، حق پیروی دونوں نشاں زد کر دیئے

اس نے واضح کر دیئے سب خیر و شر کے راستے

 

بھر کے سینوں میں حرارت جذبۂ ایمان کی

کر دیئے صیقل دلوں کے زنگ خوردہ آئینے

 

حق نما نے حق نمائی کا ادا حق کر دیا

رات دن اک کر دیا رب کی رضا کے واسطے

 

مانگتے ہیں بارگاہِ حق سے جانے کیا یہ لوگ

مل گیا محبوبِ حق تو اور پھر کیا چاہئے

 

فکرِ فردائے قیامت جب بھی دامن گیر ہو

دل میں جل اٹھتے ہیں فوراً ان کی یادوں کے دیے

 

آپ کی تصویرِ ذہنی بن تو جاتی ہے مگر

خواب میں آتے تو اصلی شکل و صورت دیکھتے

 

شرمِ عصیاں ہے کہ جس نے پا بہ جولاں کر دیا

کون سا منہ لے کے جاؤں مصطفیٰ کے سامنے

 

رحمتِ حق نے انہیں بہرِ شفاعت چن لیا

آنکھ سے جتنے بیادِ مصطفیٰ آنسو گرے

 

آپ ہی محشر میں ہیں امید گاہِ عاصیاں

آخرت میں کام کے کب رشتے سوتیلے سگے

 

قل ھوَ اللہُ احد سے لے کے تا کفواً احد

وہ نہ بتلاتے تو ہم شانِ خدا کیا جانتے

 

راہِ طیبہ لے نظرؔ شوقِ زیارت ہے اگر

گردشِ ایام پھر موقع تجھے دے یا نہ دے

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ