اردوئے معلیٰ

Search

آج سرائیکی زبان کے معروف شاعر شاکر شجاع آبادی کا یوم پیدائش ہے

شاکر شجاع آبادی(پیدائش: 25 فروری 1968ء )
——
شاکر شجاع آبادی سرائیکی زبان کے مشہور اور ہر دل عزیز شاعر ہیں۔ جسے سرائیکی زبان کا شیکسپیئر اور انقلابی شاعر کہا جاتا ہے۔
ان کا اصل نام محمد شفیع ہے اور تخلص شاکرؔ ہے، شجاع آباد کی نسبت سے شاکر شجاع آبادی مشہور ہے۔
شاکر شجاع آبادی کی پیدائش 25 فروری 1968ء کو شجاع آباد کے ایک چھوٹے سے گاوٗں راجہ رام میں ہوئی جو ملتان سے ستر 70 کلومیٹر کے فاصلے پر ہے۔ 1994ء تک بول سکتے تھے، اس کے بعد فالج کا حملہ ہوا جس کے باعث درست طور پر بولنے سے قاصر ہیں اور ان کا پوتا ان کی ترجمانی کرتا رہا۔
حکومت پاکستان کی طرف سے اعلیٰ کارکردگی کی وجہ سے 14 اگست 2006ء میں انہیں صدارتی اعزاز برائے حسن کارکردگی ملا۔
——
تصنیفات
——
لہو دا عرق
پیلے پتر
بلدین ہنجو
منافقاں تو خدا بچاوے
روسیں تو ڈھاڑیں مار مار کے
گلاب سارے تمہیں مبارک
کلامِ شاکر
خدا جانے
شاکر دیاں غزلاں
شاکر دے دوہڑے
——
سرائیکی کا شیکسپیئر شاکر شجاع آبادی از کلثوم حسین
——
صدارتی تمغہ برائے حسن کارکردگی کے حامل سرائیکی وسیب کے ممتاز شاعر شاکر شجا ع آبادی کا اصل نام محمد شفیع ہے۔ وہ31 دسمبر 1955ء میں ملتان سے 70 کلومیٹر دور شجاع آباد کے چھوٹے سے پسماندہ علاقے بستی راجہ رام، ضلع ملتان میں پیدا ہوئے۔ ان کا تخلص شاکر اور ذات سیال ہے۔ نامساعد گھریلو حالات کی وجہ سے وہ صرف پرائمری تک رسمی تعلیم حاصل کر سکے پھر حالات کی بے رحمی اور والدین کی بے بسی سے مجبور ہو کر مزدوری و محنت کشی کا رخ کیا۔
وہ نوعمری میں پولیو کی بیماری کا شکار بھی ہوئے جو وقت گزرنے کے ساتھ ساتھ مزید سنگین صورت حال اختیار کرتا گیا لیکن ان کا دماغ اور اندر کا شاعر محفوظ رہا۔ قدرت نے انہیں شعر و سخن کی دولت سے مالا مال کیا، ان کی روحِ بے قرار نے شاعری کی خلعت فاخرہ پہن لی۔ انہیں غزل اور دوہڑے کا شہنشاہ بھی کہتے ہیں۔
——
یہ بھی پڑھیں : صہبا اختر کا یوم وفات
——
شاکر شجاع آبادی نے زندگی بھر غربت سمیت مصائب و آلام کا سامناکیا، ایک مرتبہ تو مسلسل 5 پانچ دن کی فاقہ کشی کا بھی سامنا کرنا پڑا. اس لیے ان کی شاعری غربت ، معاشی پسماندگی اور محرومی جیسے عناصر کی خوبصورت عکاسی کے ساتھ ساتھ ان میں تبدیلی کا جذبہ بھی رکھتی ہے۔ انہوں نے سماجی ظلم ، معاشرتی ناانصافی ، انتہا پسندی، دہشت گردی، اور مذہبی فرقہ واریت کے خلاف باغیانہ انداز اپنایا ، اس لیے گزشتہ چند دہائیوں سے وہ سرائیکی کے مظلوم طبقات کے دلوں کی آواز بنے ہوئے ہیں۔ وہ کہتے ہیں “میرا مسئلہ صرف سرائیکی کا نہیں ہے، بلکہ میں پوری دنیا کے مظلوموں کی بات کرتا ہوں، چاہے وہ کافر ہی کیوں نہ ہوں۔ میں زیادہ سکول نہیں جاتا تھا، سب کچھ دنیا کے غور و فکر اور تجربے سے سیکھا ہے”۔ ایک انٹرویو میں انہوں نے کہا ” پاکستان کے زوال کی بڑی وجہ ظالم جاگیرداروں، سر داروں، سرمایہ داروں کا ملکی سیاست پر کنٹرول ہے اور عوام ان کے خلاف نہیں اٹھتے۔ لوگوں کو غلامی سے نکلنے کا طریقہ سکھایا جائے تو مسائل حل ہو سکتے ہیں”
شاکرشجاع آبادی خواجہ غلام فرید کو شاعری میں اپنا روحانی استاد مانتے ہیں، جبکہ غالب اور محسن نقوی ان کے پسندیدہ شاعر ہیں۔ شاکر شجاع آبادی کو سرائیکی شاعری کا غالب اور سرائیکی ادب کا شکسپیئر بھی کہا جا تا ہے۔
انہوں نے مقامی دربار میں اپنے خیالات سنانے شروع کیے، ان کا پہلا باقاعدہ مشاعرہ 1986ء میں ریڈیو پاکستان ملتان میں منعقد ہوا۔ 1990ء کی دہائی کے اوائل میں وہ سرائیکی ثقافت میں نمایاں مقام اور عروج حاصل کر چکے تھے۔
شاکر نے 1991ء میں ہونے والا آل پاکستان مشاعرے کی صدارت کی اور مشاعرہ اپنے نام کیا۔ وہ ایمان داری، غربت، عدم مساوات ، غیرمساوی معاشی تقسیم اور خطے سے متعلق پسماندگی کے موضوعات پر گفتگو کرتے ہیں۔ ان کی شاعری خدا تعالیٰ پر پختہ یقین کو بھی ظاہر کرتی ہے۔ ایسا لگتا ہے کہ اپنے اسلوب کی وجہ سے انہوں نے اپنی شاعری کو عالمی حالات سے جوڑ دیا ہے۔ اس پرائمری پاس شاعر شاکر شجاع آبادی کی شاعری پاکستان کی پانچ بہترین یونیورسٹیوں کے نصاب میں شامل ہے جن میں پنجاب یونیورسٹی لاہور، علامہ اقبال اوپن یونیورسٹی اسلام آباد، زرعی یو یورسٹی فیصل آ باد، بہاؤالدین زکریا یونیورسٹی ملتان اور اسلامیہ یونیورسٹی بہاولپور شامل ہیں۔
شاکر شجاع آبا دی 1994ء تک بولنے کے قابل تھے، لیکن پھر فالج کا حملہ ہوا جو 2004ء میں بگڑ گیا اور یوں وہ کافی حد تک مفلوج ہو گئے۔ جسمانی معذوری کی وجہ سے وہ درست طور پر بولنے سے قاصر ہیں۔
انہوں نے پانچ مختلف زبانوں میں شاعری کی ہے، کئی مجموعے چھپ چکے ہیں۔ وہ تقریباً 25 کتابوں کے مصنف ہیں۔ ان ک شاعری کا انگر یزی میں بھی ترجمہ ہوا ہے۔ مقبول کتابوں میں لہو دا عر ق، پیلے پتر، منافقاں توں خدا بچاوے، روسیں تو دھاڑیں مار مار کے ، کلامِ شاکر ، خدا جانے ، شاکر دیاں غزلاں، شا کر دے دوہڑے اور کچ دی ونگ (شبن شاکر) قابل تحسین ہیں۔ 14 اگست 2006 ء میں انہیں پہلا صدارتی ایوارڈ برائےحسن کارکردگی دیا گیا۔ وہ ان چند افراد میں سے ہیں جو اپنی زندگی میں دوسری بار ایک ہی ایوارڈ حاصل کرنے کا اعزاز رکھتے ہیں۔ انہیں ایک بار پھر، 2017ء میں دوسرا صدارتی ایوا رڈ برائے حسن کارکردگی عطا کیا گیا۔
——
منتخب کلام
——
72 حور دے بدلے گزارہ ہک تے کر گھنسوں
71 حور دے بدلے اساں کوں رج کے روٹی دے
——
نجومی نہ ڈراوے دے اساکوں بدنصیبی دے
جڈاں ہتھاں تے چھالے تھئے لکیراں خود بدل ویسن
——
دل ساڈا شاکر شیشے دا
ارمان لوہار دے ہتھ آ گئے
——
کمزوری اے شاکر بندیاں دی
انجے خون دا ناں بدنام اے
——
کیہندے کتّے کھیر پیون کیہندے بچّے بھکھ مرن
رزق دی تقسیم تے ہک وار ول کجھ غور کر
غیر مسلم ہے اگر مظلوم کوں تاں چھوڑ دے
اے جہنمی فیصلہ نہ کر اٹل کجھ غور کر
——
مرے رازق رعایت کر نمازاں رات دیاں کر دے
کہ روٹی رات دی پوری کریندے شام تھیں ویندی
انھاں دے بال ساری رات روندن بھک تو سوندے نئیں
جنھاں دی کیندے بالاں کوں کھڈیندے شام تھی ویندی
میں شاکر بھکھ دا ماریا ہاں مگر حاتم توں گھٹ کئی نئیں
قلم خیرات ہے میری چلیندے شام تھی ویندی
——
اے پاکستان دے لوکو پلیتاں کوں مکا ڈیوو
نتاں اے جے وی ناں رکھے اے ناں اوں کوں ولا ڈیوو
جتھاں مفلس نمازی ہن او مسجد وی اے بیت اللہ
جو ملاں دیاں دکاناں ہن مسیتاں کوں ڈھا ڈیوو
اتے انصاف دا پرچم تلے انصاف وکدا پئے
ایہوجی ہر عدالت کوں بمعہ املاک اڈا ڈیوو
پڑھو رحمن دا کلمہ بنڑوں شیطان دے چیلے
منافق توں تے بہتر ہے جے ناں کافر رکھا ڈیوو
جے سچ آکھن بغاوت ہے بغات ناں اے شاکر دا
چڑھا نیزے تے سر مینڈھا مینڈے خیمے جلا ڈیوو
——
میکوں مینڈا ڈکھ ، میکوں تینڈا ڈکھ ، میکوں ہر مظلوم انسان دا ڈکھ
جتھاں غم دی بھا پئی بلدی ہے میکوں روہی چولستان دا ڈکھ
جتھاں کوئی انصاف دا ناں کوئی نئیں میکوں سارے پاکستان دا ڈکھ
جیہڑے مر گئے ہن او مر گئے ہن میکوں جیندے قبرستان دا ڈکھ
——
غریب کوں کئیں غریب کیتے ، امیرزادو جواب ڈیوو
ضرورتاں دا حساب گھنو ، عیاشیاں دا حساب ڈیوو
سخاوتاں دے سنہرے پانڑیں ، دے نال جیہڑے مٹا ڈتے نیں
او لفظ موئے بھی بول پوسن ، شرافتاں دی کتاب ڈیوو
شراب دا رنگ لال کیوں اے ، کباب دے وچ اے ماس کیندا
شباب کیندا ہے ، کئیں اُجاڑے حساب کر کے جناب ڈیوو
زیادہ پھلدا اے کالا جیکوں ، خرید گھن دا اے اوہو کرسی
الیکشناں دا ڈرامہ کر کے ، عوام کوں نہ عذاب ڈیوو
قلم اے منکر نکیر شاکر ، جتھاں وی لکسو اے تاڑ گھن سی
غلاف کعبے دا چھک کے بھانوں ، ناپاک منہ تے نقاب ڈیوو
——
کوئی پُچھ ڈیوے میڈے ساہواں کُوں
میڈی جان چھڈن دا کِی گھِنسو
تُسی پیار دَا مُل وِی لاؤندے او
ساکوں پیار کرن دا کِی گھِنسو
تُساں کَلیاں وِی تے مرناں ہئے
ساڈے نال مرن دا کِی گھِنسو
ہر اِک نوں سنگت وَنڈدے او
ساڈے نال پِھرن دا کِی گھِنسو
تُسی ہسدے سوہنے لگدے او
ہر وار ہَسن دا کِی گھِنسو
ہِک کرم کرو میکوں مار ڈیوو
سرکار کرم دا کِی گھِنسو
تُساں یاد تے آؤندے رہندے اوو
دَسو آپ آوَن دا کِی گھِنسو
میڈے ساہواں نُوں کِی بھاء گھِنسو
میڈی جان گھِنن دا کِی گھِنسو
اَساں دِل دَا حال سناؤنا اے
سائیں حال سُنَن دَا کِی گھِنسو
اَسی ڈُب گئے آں تُہاڈے عشقے وِچ
ساکوں باہر کَڈھن دا کِی گھِنسو
میڈے دِل دے مُرشد! ڈھول پیا
میڈا ہَتھ پَھڑن دا کِی گھِنسو
میکوں پُچھدی اے تنہائی
میکوں نال رَکھن دا کِی گھِنسو.
——
سکھ ہندو تے نذ مسلمان ہونا چاہیدا
بندے نوں تاں پہلاں انسان ہونا چاہیدا
اودے لئی جہڑا نہ پڑھے انس دی کتاب نوں
گیتا نہ گرنت نہ قرآن ہونا چاہیدا
بن جاوے ںندا بھاویں سارا ہی شیطان دا
رب ولے کدی تے دھیان ہونا چاہیدا
چاہیدا اے یاد رکھے مالی دے احسان نوں
جداوں وی پنیری نوں جوان ہونا چاہیدا
رب تے ایمان آپے آ جاندا شاکرا
بندے دا تے بندے تے ایمان ہونا چاہیدا
——
حسرتاں کوں قید کر کے پہرے ڈیندا رہ گیاں
پیار کوں بدنام تھیونڑ توں بچیندا رہ گیاں
پھکی کھل دی اوٹ دے وچ غم لکیندا رہ گیاں
ایں طرح وی عشق دی میں لج رکھیندا رہ گیاں
رات مونجھی ڈیہنہ وی مونجھا سوچ ساری مونجھ دی
مونجھے کاغذ اتے بس غم لکھیندا رہ گیاں
در ھوا کھڑکیندی رہی اے روپ تیڈا دھار کے
رات ساری در کھولیندیاں تے ولیندیاں رہ گیاں
جو رہیسو اوہ ہی چیسو ادا سارا لوک اے
میں جڈا وی سکھ رایم ڈکھ چیندا رہ گیاں
اوں وی کیتی انت یارو پاس خاطر غیر دی
جہیں دی خاطر مندراں وچ بانگ ڈیندا رہ گیاں
پھٹ گیا اے یار میڈا میڈی جھگی ساڑ کے
ول وی شاکر بے وفا کوں میں گولیندا رہ گیاں
یار اج معلوم تھیندا اے عشق چیتا کڈ گدھا اے
گھر دی ڈیڈھی تے آ کے گھر گولیندا رہ گیاں
یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ