اردوئے معلیٰ

Search

آتی ہے جب بھی اے ندیم موجِ صبائے سیالکوٹ

آتی ہے مجھ کو بالیقیں بوئے وفائے سیالکوٹ

 

یاد ہے وہ شب سیاہ اور وہ عالمِ سکوت

آئے تھے جب مثالِ دزد مادرِ ہند کے سپوت

 

دشمنِ دیں وہ کینہ توز آئے وہاں تھے بہرِ جنگ

دل میں لئے ہوئے لعیں فتحِ مبیں کی اک امنگ

 

ساماں کئے ہوئے ہزار آئے وہاں صنم پرست

فوجِ پیادہ و سوار ٹینک مثالِ فیلِ مست

 

امن و اماں کے شہر میں لوگ پڑے ہوئے خموش

خواب کا عالمِ سرور تھا نہ کسی کو کوئی ہوش

 

اٹھا جو شورِ حشر خیز جاگے وہاں کے سب غیور

ڈالی جو ہر طرف نگاہ دیکھا عدوئے پر غرور

 

چونکے جو خواب سے یہ شیر دیکھ سکے نہ یہ سماں

جنگ کے آزمودہ کار پہنچے وہاں وہ تھے جہاں

 

گرجے عدو پہ مثلِ رعد چمکے سروں پہ مثلِ برق

دم بھر میں کر دیا انہیں آب جوئے لہو میں غرق

 

فوجِ خدائے لا شریک تھی جو ادھر شریکِ حال

ان کی صفوں میں آشکار خوف و ہراس و اختلال

 

دشمنِ دیں پہ تھا وہ رعب بھاگے وہ رکھ کے سر پہ پاؤں

خالی پڑے تھے ان کے شہر اجڑے پڑے سب ان کے گاؤں

 

آئے تھے دشمنانِ دیں شیروں پہ ڈالنے کمند

اپنے ہی دام میں اسیر آخر ہوئے یہ گو سفند

 

شکرِ خدائے دو جہاں لازم نظرؔ ہے ہم پہ آج

رکھا ہے جس نے سرفراز رکھی وطن کی جس نے لاج

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ