اردوئے معلیٰ

Search

آج معروف ناول نگار و افسانہ نگار الطاف فاطمہ کا یوم وفات ہے

الطاف فاطمہ(پیدائش: 10 جون 1927ء — وفات: 29 نومبر 2018ء)
——
الطاف فاطمہ کا تعلق ریاست پٹیالہ سے ہے۔ ان کے والد کا نام فضل امین تھا۔ الطاف فاطمہ لکھنوء میں 1927 میں پیدا ہوئیں۔ اسی جگہ انہوں نے ہوش سنبھالا اور لکھنؤ کی تہذیبی روایات کا اثران کی شخصیت پر پڑا۔
تقسیم ملک کے بعد وہ اپنے خاندان کے ساتھ لاہور آگئیں۔ یہاں لیڈی میکلیگن کالج سے بی ایڈ کیا۔ اس کے بعد پنجاب یونیورسٹی سے اردو ادب میں ایم اے کرنے کے بعد اسلامیہ کالج برائے خواتین لاہور میں اردو کی استاد مقرر ہوئیں۔ اور اسی کالج سے شعبہِ اردو کی سربراہ کی حیثیت سے ریٹائر ہوئیں۔
تخلیقی سفر
الطاف فاطمہ کا پہلا افسانہ انيس سو باسٹھ ميں لاہور کے موقر ادبي جريدے ’ادب لطيف‘ ميں شائع ہواتھا۔
الطاف فاطمہ کے افسانے ملک کے مشہور جرائد میں شائع ہوتے رہتے ہیں۔ چارناول (نشان محفل) (دستک نہ دو) (چلتا مسافر) (خواب گر) چھپ چکے ہیں۔ (اردو میں سوانح نگاری) ایک اچھی تنقیدی کتاب ہے۔ افسانوں کے چار مجموعہ وہ جسے چاہا گیا، تار عنکبوت، جب دیواریں گریہ کرتی ہیں، دید وادید، گواہی آخر شب کی بھی شائع ہو چکے ہیں۔ الطاف فاطمہ نے ہمیشہ ناول اور افسانے اس قدر فن کی گہرائی میں ڈوب کر لکھے کہ بقول ان کے سقوط ڈھاکہ پر انہوں نے اپنا ناول چلتا مسافر دس برس ميں مکمل کيا تھا۔
——
یہ بھی پڑھیں : ترا لطف تیری عطا فاطمہ
——
الطاف فاطمہ 29نومبر 2018 کو وفات پا گئیں۔
——
تصانیف
——
ناول
دستک نہ دو (ناول) 1964ء
نشان ِ محفل (ناول) 1975ء
چلتا مسافر (ناول) 1980ء
خواب گر (ناول)2008ء
افسانوی مجموعے
تار ِ عنکبوت (افسانے) 1990ء
جب دیواریں گریۂ کرتی ہیں (افسانے) 1988ء
وہ جسے چاہا گیا (افسانے) مکتبۂ اُردو ڈائجسٹ۔ لاہور 1969ء
دید وادید (افسانے) جمہوری پبلیکیشنز لاہور 2017ء انفاق فاؤنڈیشن، کراچی لٹریچر فیسٹیول کی جانب سے انعام یافتہ
گواہی آخر شب کی (افسانے) جمہوری پبلیکیشنز لاہور
تنقید
اُردو میں فن ِ سوانح نگاری اور اس کا ارتقا (تحقیق و تنقید ) کراچی،اُردو اکیڈمی سندھ۔ اپریل 1961ء
متفرق
روزمرہ آداب (1963ء)
تراجم
جاپانی افسانہ نگار خواتین (ترجمہ) نوریکو مینرو ٹالپٹ،کیو کواربے سیلڈن،الطاف فاطمہ،مترجم،لاہور،گورا پبلشرز، 1994ء
سچ کہانیاں : بنگالی، گجراتی،مراٹھی،تامل اور ہندی افسانے لاہور۔ 2000ء
بڑے آدمی اور ان کے نظریات،سیاسی مضامین
نغمے کا قتل ، ہارپر لی
حویلی کے اندر، رما مہتہ
——
یہ بھی پڑھیں : فاطمہ ، حیدر پہ جاں قربان ہو
——
میرے بچے میری دولت، ڈیبی ٹیلر
موتی، جان سٹین بیک
زیتون کے جھنڈ، ایلسا مارسٹن، (2016)
لاطینی امریکی خواتین کے افسانے
——
الطاف فاطمہ کا فِکشن از ڈاکٹر ناظر محمود
——
فہمیدہ ریاض کی وفات کے بعد بہ مشکل ایک ہفتہ گزرا ہوگا کہ ایک اور نام وَر مصنّفہ ہم سے بچھڑ گئیں۔ الطاف فاطمہ نے نوّے سال کی عُمر میں 20 نومبر 2018ء کو وفات پائی۔ فہمیدہ ریاض اور الطاف فاطمہ اُن لکھاریوں میں شامل تھیں، جو ساٹھ کی دہائی میں ادبی منظر نامے پر اُبھرے۔ فاطمہ، فہمیدہ سے بیس سال بڑی تھیں اور اُنہوں نے تقسیمِ ہند کے حالات کو بہ غور دیکھا تھا۔ دونوں نے یوپی سے ہجرت کی تھی۔ فاطمہ نے لاہور کو اپنا مسکن بنایا اور فہمیدہ، حیدرآباد میں آباد ہوئیں۔ ان دونوں کی تحریروں میں مختلف تجربات کا عکس نظر آتا ہے۔ الطاف فاطمہ وطن پرست تھیں، تو اُن کے ناولز اور افسانوں میں حبّ الوطنی اور مذہبیت کا رنگ واضح نظر آتا ہے، جب کہ فہمیدہ ریاض ترقّی پسند سیاست میں رنگی ہوئی تھیں۔ الطاف فاطمہ کا ایک اپنا ہی منفرد اسلوب اور کرشمہ تھا، جو اُن کے کرداروں میں جھلکتا تھا، خاص طور پر اُن کے نسوانی کرداروں میں۔تاہم، اُن کے کرداروں کی طرف ہم کچھ دیر میں آتے ہیں، پہلے اُس ماحول کا کچھ ذکر، جس میں اُنھوں نے پرورش پائی۔
الطاف فاطمہ، مولانا فضل حق خیر آبادیؒ کے وسیع خاندان سے تعلق رکھتی تھیں اور اُن کے ماموں، سیّد رفیق حسین رضوی بہت اچھی کہانیاں لکھتے تھے، جن میں انسانوں کے ساتھ، جانوروں کے تعلقات کو پیش کیا جاتا تھا۔ جس طرح فہمیدہ ریاض نے اجمل کمال کے جریدے ’’آج ‘‘ میں محمّد خالد اختر کا تذکرہ کیا ، اسی طرح الطاف فاطمہ نے سیّد رفیق حسین پر ایک مضمون، جون 1968ء میں رسالے’’نیا دَور‘‘ میں لکھا، جس کی مدیران، قمر سلطانہ اور جمیلہ ہاشمی تھیں۔ ’’نیا دَور‘‘ کے اس شمارے میں سیّد رفیق حسین پر موجود گوشے میں الطاف فاطمہ کے ساتھ، اختر حسین رائے پوری وغیرہ کے مضامین بھی شایع ہوئے۔ ساتھ ہی رفیق حسین کی کچھ کہانیاں اور ناولٹ بھی شامل کیے گئے۔ اس مضمون میں الطاف فاطمہ نے بتایا کہ کس طرح اُن کا بچپن علی عبّاس حسین اور سیّد مسعود حسن رضوی کی سرپرستی میں گزرا۔ یاد رہے، مسعود حسن رضوی، معروف افسانہ نگار، نیّر مسعود کے والد تھے۔ اس ماحول میں الطاف فاطمہ کا نکھرنا ایک فطری عمل تھا۔ جب وہ لاہور منتقل ہوئیں، تو اُنہوں نے اُردو ادب اور تعلیم کے مضامین میں اسناد حاصل کیں، پھر تدریس کے طویل فرائض انجام دینے کے بعد، اُردو کی پروفیسر کی حیثیت سے سبک دوش ہوئیں۔
——
یہ بھی پڑھیں : الطاف علی بریلوی کا یوم وفات
——
اُس دَور کے دیگر لکھنے والوں، مثلاً راجندر سنگھ بیدی، عصمت چغتائی، کرشن چندر اور سعادت حسن منٹو کے برعکس اُنہیں اس اَمر میں دِل چسپی نہیں تھی کہ اپنی تحریروں میں تمام مذاہب سے تعلق رکھنے والوں پر بیتے ظلم و ستم کی داستانیں رقم کریں۔ مثال کے طور پر، الطاف فاطمہ کا غالباً سب سے مشہور ناول’’دستک نہ دو‘‘ ہے، جو تقسیمِ ہند سے قبل کے چند سال کے بارے میں ایک اچھا ناول ہے۔ اس میں متحدہ ہندوستان کے شان دار ماضی کا ذکر ہے، جس میں ہندو اور مسلمان مل جُل کر رہتے تھے، مگر اس ناول میں قیامِ پاکستان کے وقت ہونے والے فسادات میں صرف مسلمانوں کو ظلم و ستم کا نشانہ بنتے دِکھایا گیا۔ اس طرح فسادات کے اس وسیع پس منظر کو نظر انداز کیا گیا، جس میں ہندو، مسلم اور سِکھ سب متاثر ہوئے تھے۔ گو کہ الطاف فاطمہ کی تحریروں کا یہ ایک نسبتاً کم زور پہلو ہے، پھر بھی اُن کی خواتین کے کردار بڑے بھرپور ہیں۔ اس کی ایک مثال ’’دستک نہ دو‘‘ کی چھوٹی بچّی’’ گیتی‘‘ ہے، جس کی ایک چینی مسلمان سے دوستی ہوجاتی ہے، جو سائیکل پر گھریلو سامان بیچتا پِھرتا تھا۔ جب گیتی ایک درخت سے گر کر اپنی ٹانگ تڑوا بیٹھتی ہے، تو یہی چینی اُسے گھر پہنچاتا ہے اور پھر اُس کی دل جوئی کے لیے روز چکر لگاتا ہے۔ اپنے خاندان کی مخالفت کے باوجود، گیتی اُس چینی سے ملتی رہتی ہے، جس کا خاندانی نام’’ لیو چو‘‘ اور اسلامی نام، صفدر یاسین ہے۔ اس کردار میں ہمیں ٹیگور کے ’’کابلی والا‘‘ کی جھلک نظر آتی ہے، جو افغانستان سے بنگال جاتا ہے، جہاں اُس کی ایک چھوٹی بچّی سے دوستی ہوجاتی ہے۔ کابلی والا اور صفدر یاسین میں یہ قدر مشترک ہے کہ دونوں اپنے گھروں کو یاد کرتے ہیں اور اُنہیں گھر سے ہزاروں میل دُور ایک اجنبی وطن میں ،ایک چھوٹی بچّی سے اپنائیت ہوجاتی ہے۔گیتی اپنی سائیکل پر گھومتی پِھرتی ہے اور بڑی ہوکر اپنے ایک رشتے دار سے اظہارِ محبّت کرتی ہے، جس میں جھجک نام کو نہیں۔ جب گیتی کے گھر والوں کو اس یک طرفہ محبّت کا پتا چلا، تو گیتی اپنی والہانہ محبّت کا برملا دفاع کرتی ہے اور پھر کچھ عرصے بعد گھر چھوڑ دیتی ہے۔
الطاف فاطمہ کا ایک اور ناول،’’چلتا مسافر‘‘ ہے، جس میں بڑی مہارت سے ایک نہیں، دو تقسیموں کی داستان بیان کی گئی ہے۔ اس ناول میں 1940ء سے 1970ء کے درمیان کے واقعات کا احوال ملتا ہے، لیکن اگر ہم ’’چلتا مسافر‘‘ کا موازنہ قرّاۃ العین حیدر کے ناول ’’آخر شب کے ہم سفر‘‘ سے کریں، جو تقریباً اُسی دَور کو بیان کرتا ہے، تو ہمیں دونوں میں واضح فرق نظر آتا ہے۔ یعنی ایک ہی جیسے واقعات کو دیکھنے کا انداز، دونوں کے ہاں مختلف ہے۔قرّاۃ العین حیدر کا مشاہدہ خاصا جذباتی ہے اور وہ بڑے عالمانہ انداز میں واقعات کو بیان کرتی ہیں، جب کہ الطاف فاطمہ کی جذباتی وابستگی اپنے بہاری کرداروں کے ساتھ بڑی واضح ہے۔ تقسیم سے پہلے اور بعد میں بہار میں چند بڑے فسادات ہوئے۔ الطاف فاطمہ نے’’چلتا مسافر‘‘ میں وہاں کے ایک زمین دار خاندان کی کہانی لکھی ہے۔ یہ پورا خاندان اتنا ہی شریف ہے، جتنی کہ اشرافیہ ہوسکتی ہے۔خاندان کے سربراہ، سیّد مبشر مسلم لیگ کے سرگرم کارکن ہیں اور اُن کا بیٹا، مزمّل بھی باپ کے نقشِ قدم پر چلتے ہوئے مسلمانوں کے لیے آزاد مُلک کا داعی ہے۔ اس کے باوجود، یہ لوگ کانگریسی مسلمانوں سے اچھے تعلقات رکھتے ہیں۔ ’’چلتا مسافر‘‘ کی سب سے بڑی خُوبی یہ ہے کہ اس میں اُس خاندان کی پہلی ہجرت، بہار سے مشرقی بنگال اور پھر 1971ء کے بعد مشرقی پاکستان سے، مغربی پاکستان منتقلی بڑے اچھے انداز سے بیان کی گئی ہے۔ یہ ناول اُن کی تخلیق صلاحیتوں کا اعلیٰ نمونہ ہے۔’’دستک نہ دو‘‘ کی گیتی کی طرح، ’’چلتا مسافر‘‘ میں عورت کا ایک مضبوط کردار ’’ نصیبا‘‘ کا ہے، مگر گیتی اور نصیبا، دونوں سماجی دباؤ میں آکر خود سے بڑی عُمر کے ایسے مَردوں سے شادی کرلیتی ہیں، جن سے اُنہیں کوئی خاص لگاؤ نہیں تھا۔ یہاں ہمیں معروف بنگالی مصنّف، شرت چند چٹر جی کا کردار، ’’پارو‘‘ یاد آ رہا ہے، جو اُنہوں نے اپنے ناول ’’دیو داس‘‘ کے لیے تخلیق کیا تھا۔ پارو بھی خود سے بڑی عُمر کے مَرد سے مجبوراً شادی کرلیتی ہے۔ ’’چلتا مسافر‘‘ کا بھی کم زور پہلو یہی ہے کہ اُس میں ظلم و ستم کے شکار زیادہ تر بہاری ہی دِکھائے گئے ہیں۔ لیکن اِن کم زور پہلوؤں کے باوجود دونوں، یعنی ’’دستک نہ دو‘‘ اور ’’چلتا مسافر‘‘ اُس دَور کے واقعات کی تفصیلی تصویر پیش کرتے ہیں، جو کہ ہماری تاریخ کے فیصلہ کُن برس تھے۔
——
یہ بھی پڑھیں : سوچتا رہتا ہوں اے کاش کچھ ایسا لکھوں
——
اِن کے علاوہ، الطاف فاطمہ کے دو اور ناولز ہیں، یعنی ’’نشانِ محفل‘‘ اور ’’خواب گر۔‘‘ نیز، اُنھوں نے درجنوں کہانیاں بھی لکھیں، جو زیاہ تر 1965ء اور 1971ء کی جنگوں کے پس منظر میں لکھی گئیں۔ مثلاً ایک کہانی کا عنوان ہے ’’مرگِ محبّت‘‘، جو 1966ء میں شاہد احمد دہلوی کے ’’نقش‘‘ میں شایع ہوئی۔ اس میں 1965ء کی جنگ کے واقعات بیان کیے گئے۔ اسی طرح ایک اور کہانی کا عنوان ’’تعمیرِ نو‘‘ ہے، جو 1971ء کی جنگ کے بعد لکھی گئی۔ اس میں مشرقی پاکستان کی علیٰحدگی کے بعد، مغربی پاکستان کی تعمیرِ نو کی نوید سُنائی گئی۔ ایک کہانی ’’سات سو چھیاسی‘‘ ہے، جو لکھی تو 1971ء میں گئی، مگر2011 ء میں پنجاب یونی ورسٹی کے گولڈن جوبلی نمبر میں شایع ہوئی۔ الطاف فاطمہ کی کہانیوں کے کئی مجموعے شایع ہوئے، جن میں’’وہ جسے چاہا گیا‘‘، ’’دیواریں جب گریہ کرتی ہیں‘‘ اور ’’تارِ عنکبوت‘‘ شامل ہیں۔ اُن کے مجموعے ’’وہ جسے چاہا گیا‘‘ کی ایک کہانی، ’’گواہی‘‘ ہے، جس میں 1965ء کی جنگ کے بعد سرحد پار سے آنے والا شخص اس بات کی گواہی دیتا ہے کہ واقعی جنگ کے دَوران کچھ نامعلوم سفید پوش محاذ پر موجود تھے اور پاکستانی فوج کی مدد کررہے تھے۔ جب اس بات کو افواہ یا مذاق سمجھا جاتا ہے، تو وہ عینی شاہد قسمیں کھا کر یقین دلاتا کہ ہے یہ افواہ نہیں، بلکہ درحقیقت ایسا ہوا تھا۔ یاد رہے، ایسی ہی باتیں قدرت اللہ شہاب نے اپنی سوانح عُمری ’’شہاب نامے‘‘ میں لکھی ہیں۔
الطاف فاطمہ کی تقریباً تمام تحریریں آن لائن موجود ہیں اور جو بھی پاکستان کی تاریخ کو سمجھنا چاہتا ہے، اُسے یہ تحریریں ضرور پڑھنی چاہئیں۔ تاہم، چوں کہ وہ تاریخی واقعات کو ایک خاص رنگ میں پیش کرتی ہیں، اس لیے بہتر ہوگا کہ قارئین ان حالات و واقعات کے بارے میں دیگر مصنّفین کی تحریریں بھی پڑھ لیں، جن میں شہزاد منظر، زاہدہ حنا، مسعود اشعر اور قرّاۃ العین حیدر وغیرہ قابلِ ذکر ہیں۔
یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ