معروف شاعر آزاد انصاری کا یوم پیدائش

آج معروف شاعر آزاد انصاری کا یوم پیدائش ہے

آزاد انصارینام و نسب
۔۔۔۔۔۔۔۔۔
نام : الظاف احمد انصاری ، تاریخی نام: نظیر حسین ، کنیت: ابوالاحسان ، تخلص: آزاد
ولادت12 اکتوبر 1871ء ناگپور خاص ، والد کا نام : محمد حسن خلف امیر احمد
۔۔۔۔۔۔۔۔۔
حالاتِ زندگی
۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ابھی عمر سات برس بھی نہ ہونے پائی تھی کہ والد ہیضہ کی بیماری سے انتقال کر گئے ۔
بنیادی تعلیم کے بعد آزاد انصاری گلاؤٹھی میں ایک سال تک فارسی کی ابتدائی کتابیں پڑھتے رہے ۔ پھر مختلف مدارس سے فارسی اور عربی کی تعلیم حاصل کی ۔
جدید تعلیم سے اس لیے دور رہے کہ والد جو کہ جدید تعلیم کے حامی تھے ان کا سایہ سر سے اٹھنے کے بعد نانا اور ماموں کے زیر نگرانی تعلیم پائی جو کہ جدید تعلیم کو کفر سمجھتے تھے ۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔
یہ بھی پڑھیں :
۔۔۔۔۔۔۔۔۔
تعلیم چھوٹی تو شادی کر دی گئی ۔ شادی کے بعد ضروریات زندگی نے مجبور کیا تو مولانا حکیم نور احمد صاحب سہارنپوری اور ڈاکٹر احمد خان لکھنوی سے طبی ڈاکٹری کی تعلیم پائی ۔ طبی سند حاصل کرنے کے بعد کاروبار مطب جاری کر کے گذر اوقات کا ذریعہ بنا لیا ۔
1909 میں اہلیہ کا انتقال ہو گیا۔ 1919 میں علی گڑھ آئے اور ڈیڑھ سال تک وہیں رہے ۔ پھر آزاد انصاری دہلی چلے آئے ۔ اس کے بعد 1923 کو حیدر آباد دکن پہنچ گئے ۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔
شاعری کی ابتدا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔
آزاد انصاری کی عمر ابھی 13 یا 14 برس تھی جب ضلع مظفر نگر میں منشی شوکت علی مرحوم شوکت اور دیگر بزرگوں نے ایک ماہانہ مشاعرے کی بنا ڈالی ۔ سب سے پہلا طرح مصرع تھا :
یہ جوشِ جنوں رنگ لانے کو ہے
جب اس مشاعرے کا چرچا ہوا تو آزاد انصاری نےاپنے ہم عمر اور بڑے لڑکوں کو غزلیں کہتے دیکھا تو انہیں بھی شعر کہنے کا شوق چرایا اور کوشش کر کے اس طرح میں چھے یا سات شعر کہہ ڈالے ۔ ان کا مطلع کچھ یوں تھا :
۔۔۔۔۔۔۔۔۔
بہارِ چمن گُل کھلانے کو ہے
یہ جوشِ جنوں رنگ لانے کو ہے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔
یہ باضابطہ طور پہ آزاد انصاری کی پہلی غزل تھی ۔ مگر چونکہ کم سنی تھی اور غزل گوئی کا پہلا موقع تھا تو یہ غزل اپنے ہم عمر لڑکوں کے سوا کسی کو سنانے کی ہمت نہ ہوئی ۔
آزاد انصاری کے مکان سے کچھ فاصلے پہ قاضی محمد یٰسین صاحب مرحوم رہتے تھے جو خود تو شاعر نہیں تھے لیکن کافی صاحبِ علم اور فہم و سخن شناس تھے ۔ ان کے مکان پہ اکثر شعرا و ادباء کا اجتماع ہوا کرتا تھا ۔ ایک روز تجویز دی کہ اک مصرعِ طرح دیا جائے جس پہ آزاد انصاری اور ولی حسن ناظمؔ رات کو غزلیں کہیں اور صبح مجمع میں آ کر سنائیں ۔ طرح تجویز ہوئی :
ہنر مندوں سے بہتر آجکل ہیں بے ہنر دیکھو
رات کو دونوں نے غزلیں کہیں اور صبح مجمع میں جا کر سنائیں ۔ دونوں کو کافی داد ملی ۔ اس کے کچھ اشعار حسبِ ذیل ہیں :
۔۔۔۔۔۔۔۔۔
جو الفت کا مزا چکھنا ہے تم بھی عشق کر دیکھو
نصیب دشمناں مرنا ہے گر منظور ، مر دیکھو
عجب حالت ہے دل کی کوئی غم ہو کوئی آفت ہو
جہاں دیکھو اسی کم بخت کو سینہ سپر دیکھو
چرا کر دل کو دزدیدہ نگاہوں سے وہ کہتے ہیں
یہاں ہو گا وہاں ہو گا اِدھر دیکھو ، اُدھر دیکھو
۔۔۔۔۔۔۔۔۔
یہ بھی پڑھیں : شاعر اختر انصاری دہلوی کا یوم وفات
۔۔۔۔۔۔۔۔۔
آزاد انصاری کا دل شاعری میں پانچ چھ سال تک داغؔ ، جلالؔ اور حضرت امیر مینائیؔ کے نقشِ قدم پہ چلنے کے بعد اِن باکمال اصحاب کے اتباع سے اُکتا گیا اور انہوں نے تمام اگلا پچھلا ذخیرۂ شعر و شاعری بیزار ہو کر نذرِ آتش کر ڈالا ۔ اور قدیم تخلص "عطارد” کو بھی خر آباد کہہ ڈالا ۔ نیا تخلص آزاد رکھ لیا ۔
شاعری میں الطاف حسین حالیؔ اور مولانا بیدلؔ سے اصلاح لی ۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔
شاعرانہ خصوصیات
۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ہر شاعر اور بالخصوص حقیقی شعرا کے کلام میں کچھ نہ کچھ خصوصیات ہوتی ہیں جن سے ان کا کلام باقی شعراء کے کلام سے ممتاز نظر آتا ہے ۔ آزاد انصاری کے کلام کی مندرجہ ذیل خصوصیات تھیں جو ان کے کلام کو باقی شعراء کے کلام سے ممتاز کرتی تھیں :
کلام کی اصلی ترتیب
کلام کے اجزاء کی جو اصل ترتیب ہے وہ بحالِ خود قائم رہے مثلاََ فاعل ، مفعول ، متعلقات ِ فعل، مبتدا ، خبر جس ترتیب کے ساتھ ہر وقت بول چال میں آتے ہیں وہی ترتیب شعر میں قائم رہے ۔ اگرچہ یہ کم و بیش ناممکن ہے لیکن اگر اصلی ترتیب پوری پوری قائم نہیں رہ سکتی تو بہر حال اُس کے
قریب قریب پہنچ جائے ۔
مثال کے طور پہ ان اشعار کو دیکھیے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔
نہ محبت نہ محبت کے مراسم کا لحاظ
تم کو بے شک روشِ اہلِ وفا آتی ہے
صبر ممکن ہی سہی ، امکان سے خارج تو نہیں
ہم کو خود دردِ محبت کی دوا آتی ہے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔
سلاست و صفائی زبان
اس کی تعریف کی ضرورت نہیں اس کو سب اہلِ علم اچھی طرح جانتے ہیں ۔
مثال ملاحظہ ہو
۔۔۔۔۔۔۔۔۔
سیکڑوں خوبیوں کے مالک ہو
ایک صاحب وفا نہیں ، نہ سہی
آپ نے درد سُن لیا ہوتا
درد کی کچھ دوا نہیں ، نہ سہی
دل ازل سے ترا شناسا ہے
آنکھ شکل شناسا نہیں ، نہ سہی
آپ کا پتا تو لگا ہی لیا
اب جو میرا پتہ نہیں ، نہ سہی
۔۔۔۔۔۔۔۔۔
یہ بھی پڑھیں : ممتاز ترقی پسند شاعر اختر انصاری دہلوی کا یوم پیدائش
۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ندرتِ بیان
یہ اچھوتے اندازِ بیان اور انوکھی ، دلچسپ ترکیبوں یا ان دونوں کے مجموعے کا نام ہے ۔ مثال کے طور پہ :
۔۔۔۔۔۔۔۔۔
چارہ سازِ زخمِ دل ، درمانِ زخم اچھا کیا
زخم کی سب لذتیں مجروحِ درماں ہو گئیں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کیا خاک مان لوں کہ وہ مہرباں نہ تھا
اِک طرزِ التفات سے کیا کچھ عیاں نہ تھا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔
تکرارِ الفاظ
کسی ایک لفظ یا چند لفظوں یا جملوں کا ایک مصرع یا ایک ہی شعر میں مکرر استعمال ۔ تکرارِ الفاظ کلام کا سب سے بڑا عیب مانا جاتا ہے اور درحقیقت وہ ہے بھی ۔ مگر اسی سب سے بڑے عیب کو خوبی خوش اسلوبی اور سلیقے سے برتا جائے تو یہی عیب کلام کا سب سے بڑا حُسن بن جاتا ہے ۔ تکرارِ الفاظ کو دلکش بنانے کے لیے بڑی احتیاط اور سلیقہ کی ضرورت ہوتی ہے جو ہر شاعر کو میسر نہیں آتا ۔ مگر آزاد انصاری کے کلام میں یہ خاصیت بہتات سے ملے گی ۔
چند مثالیں ملاحظہ ہوں ۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔
محبت میں بقا میری ، محبت میں فنا میری
محبت ابتدا میری ، محبت انتہا میری
۔۔۔۔۔۔۔۔۔
خلافِ سلوکِ محبت کے خوگر
خلافِ سلوکِ محبت کہاں تک
مسلسل ستم کی حکومت کے بانی
مسلسل ستم کی حکومت کہاں تک
۔۔۔۔۔۔۔۔۔
تم اور دل آزاری اربابِ محبت
اربابِ محبت کا یہ شیوا نہیں ہوتا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔
صنعت ِ ترصیع و تقابل
جس طرح نثر قوافی کے التزام کے ساتھ لکھی جائے تو وہ نثرِ مقفےٰ کہلاتی ہے اسی طرح جب نظم میں یہ التزام ملحوظ، خاطر رکھا جائے تو وہ مرصع کہلاتی ہے ۔
اور صنعتِ تقابل ہم وزن یا ہم قافیہ مقابلے کے الفاظ استعمال کرنے سے وجود میں آتی ہے ۔ یہ بھی صنعتِ ترصیع کی ہی ایک قسم ہے ۔ مثال کے طور پہ :
۔۔۔۔۔۔۔۔۔
نامِ خدا۔ جدہر گئے ۔ دل میں اُتر اُتر گئے
خنجرِ آبدار ہو ۔ دشنۂ تابدار ہو
رفعِ ملال چاہیے ۔ کچھ تو خیال چاہیے
رُوحِ تن فگار ہو ۔ راحتِ جان زار ہو
تم سے نظامِ دو جہاں ۔ تم سے قیامِ دو جہاں
مرجعِ ہر دیار ہو ۔ مرکزِ ہر مدار ہو
۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اُدھر دل طُولِ حسرت سے بہ حالِ زار شیون میں
اِدھر میں دل کی اس گت سے پریشانی میں، اُلجھن میں
تمہارا رنجِ فرقت ہے کہ طاری ہے مرے دل پر
تمہارا دردِ اُلفت ہے کہ ساری ہے مرے تن پر
یہ کیا آفت ہے اب تقدیر کروٹ تک نہیں لیتی
یہ کیا شامت ہے اب تاثیر آہوں میں نہ شیون میں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔
شعر میں اصطلاحات ِ علمیہ اور بعض مشہور قصوں یا نظریوں کا تلمیحاََ استعمال ۔ مثال کے طور پہ :
۔۔۔۔۔۔۔۔۔
پرستش کے قابل ہو ، تحقیق ہے
تصور کے ہمراہ تصدیق ہے
وہ مجھ سے قریب اور میں اُس سے دور
مری جمع بھی رشکِ تفریق ہے
"تصور ” اور ” تصدیق ” دونوں علمِ منطق کی اصطلاحات ہیں اور جمع اور تفریق علمِ حساب کی
۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ہمیشہ غم نصیب آزادؔ نے تیری خوشی چاہی
ہمیشہ راحتِ دنیا کو ممنوعہ شجر جانا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔
یہ بھی پڑھیں : خاکم بدہن کچھ ہیں سوالات بھی سر میں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ستم ہے یون سکونِ دل کے مٹنے کا ستم دیکھیں
تمہارے درد کا ردِ عمل ہو اور ہم دیکھیں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔
آزاد انصاری نے اپنی زندگی میں کبھی کوئی ایسا شعر نہیں کہا جس میں کوئی شخص مرنے کے بعد زندوں کی طرح گفتگو کرتے دکھایا گیا ہو ۔ اور نہ ہی کوئی ایسا شعر کہ جس کو قبل از مرگ اور قبل از آمدِ محشر میدان ِ محشر قائم کر کے باہم سوال و جواب کا ذریعہ بنایا گیا ہو ۔ اسی طرح آزاد انصاری نے کبھی خلافِ فطرت شعر کہنے کی کوشش نہیں کی ۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔
وفات
۔۔۔۔۔۔۔۔۔
آزاد انصاری 25 اپریل 1942ء میں حیدرآباد میں انتقال کرگئے۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔
منتخب کلام
۔۔۔۔۔۔۔۔۔
افسوس بے شمار سخن ہائے گفتنی
خوف فساد خلق سے نا گفتہ رہ گئے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ہم کو نہ مل سکا تو فقط اک سکون دل
اے زندگی وگرنہ زمانے میں کیا نہ تھا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دیدار کی طلب کے طریقوں سے بے خبر
دیدار کی طلب ہے تو پہلے نگاہ مانگ
۔۔۔۔۔۔۔۔۔
بندہ پرور میں وہ بندہ ہوں کہ بہر بندگی
جس کے آگے سر جھکا دوں گا خدا ہو جائے گا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کسے فرصت کہ فرض خدمت الفت بجا لائے
نہ تم بیکار بیٹھے ہو نہ ہم بیکار بیٹھے ہیں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔
طلب عاشق صادق میں اثر ہوتا ہے
گو ذرا دیر میں ہوتا ہے مگر ہوتا ہے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اب ہم کو خوفِ قیدِ زماں و مکاں کہاں
اب جس جہاں میں ہم ہیں وہاں یہ جہاں کہا
اب قلب میں وہ برقِ محبت طپاں کہاں
اب جسم میں وہ روحِ رواں و دواں کہاں
اب جورِ گاہ گاہ کا احساں بھی کم نہیں
اب وہ توقعِ کرمِ بیکراں کہاں
جورِ فلک سے تو مفر آساں ہے، مگر
تیری نگاہِ لطف سے شکلِ اماں کہاں
وہ بدنصیب ہوں کہ تری آرزو مجھے
ناشادماں بھی رکھ نہ سکی، شادماں کہاں
جس باغ میں تمہارے قدم سے بہار آئے
اُس باغ کی بہار کو خوفِ خزاں کہاں
وہ میکدے میں شیخ کی تشریف آوری
وہ میری التماس کہ حضرت یہاں کہاں
شیخِ حرم بھی مرجعِ اہلِ جہاں سہی
لیکن بسانِ حضرتِ پیرِ مغاں کہاں
ارمانِ التفاتِ دلِ دوستاں درست
شایانِ التفات دل ِ دوستاں کہاں
آزاد! اب قفس سے رہا بھی ہوئے تو کیا
گو آشیاں کی دُھن ہے، پر اب آشیاں کہاں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔
یہ بھی پڑھیں : ان کا خیال ہے مری دنیا کہیں جسے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔
وہ دل کہاں سے لاؤں شکیبا کہیں جسے
باقی بھی ہو، شکیب کا یارا کہیں جسے
وہ درد دے کہ درد تمنّا کہیں جسے
وہ دکھ عطا ہو، عین مداوا کہیں جسے
سُن مجھ سے سُن، وہ کیا ہے؟ فقط ربط حسن و عشق
اس دہر کی حقیقت کبریٰ کہیں جسے
اے مرکز اُمید! خبر لے، کہ مٹ چلی
وہ آس زندگی کا سہارا کہیں جسے
ترے نثار، تو نے مجھے دل عطا کیا
اور دل وہ دل کہ شوق سراپا کہیں جسے
دیدار حسن دوست کی حسرت بجا، مگر
وہ دیدہ لا کہ دیدہء بینا کہیں جسے
تکمیل ربط مرکز اعلٰی کی دیر ہے
خود کھینچ لےگا مرکز اعلٰی کہیں جسے
اب میں کہاں ہوں، جلوہ گہ حسن دوست میں
اب میں وہاں ہوں، حسن کی دنیا کہیں جسے
اک ہم کہ بندگان تمنّا میں بھی ذلیل
اک تم کہ سب خدائے تمنّا کہیں جسے
تدبیر کیا ہے، آپ کی جانب سے حکم کار
تقدیر کیا ہے آپ کا منشا کہیں جسے
اے جستجوئے منزل عالی! ادب، ادب
زیر قدم ہے عرش معلّیٰ کہیں جسے
اے فلیسوفِ خام تجھے یہ خبر نہیں
خود فلسفہ ہے عشق کا سودا کہیں جسے
پیری میں شغلِ بادہ و شاہد وہ شغل ہے
لطف شباب رفتہ کا احیا کہیں جسے
نادان! جا، تمام بُروں کو برا نہ کہہ
اچھا وہی نہیں ہے سب اچھا کہیں جسے
کیا آپ جانتےنہیں؟ آزاد کون ہے
بندہ نواز! آپ کا بندہ کہیں جسے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔
حق بنا باطل بنا ناقص بنا کامل بنا
جو بنانا ہو بنا لیکن کسی قابل بنا
شوق کے لائق بنا ارمان کے قابل بنا
اہل دل بننے کی حسرت ہے تو دل کو دل بنا
عقدہ تو بے شک کھلا لیکن بہ صد دقت کھلا
کام تو بے شک بنا لیکن بہ صد مشکل بنا
جب ابھارا ہے تو اپنے قرب کی حد تک ابھار
جب بنایا ہے تو اپنے لطف کے قابل بنا
سب جہانوں سے جدا اپنا جہاں تخلیق کر
سب مکانوں سے جدا اپنا مکان دل بنا
پھر نئے سر سے جنون قیس کی بنیاد رکھ
پھر نئی لیلیٰ بنا ناقہ بنا محمل بنا
یہ تو سمجھے آج آزادؔ ایک کامل فرد ہے
یہ نہ سمجھے ایک ناقص کس طرح کامل بنا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔
نہ پوچھو کون ہیں کیوں راہ میں ناچار بیٹھے ہیں
مسافر ہیں سفر کرنے کی ہمت ہار بیٹھے ہیں
ادھر پہلو سے وہ اٹھے ادھر دنیا سے ہم اٹھے
چلو ہم بھی تمہارے ساتھ ہی بیکار بیٹھے ہیں
کسے فرصت کہ فرض خدمت الفت بجا لائے
نہ تم بیکار بیٹھے ہو نہ ہم بیکار بیٹھے ہیں
جو اٹھے ہیں تو گرم جستجوئے دوست اٹھے ہیں
جو بیٹھے ہیں تو محو آرزوئے یار بیٹھے ہیں
مقام دستگیری ہے کہ تیرے رہرو الفت
ہزاروں جستجوئیں کر کے ہمت ہار بیٹھے ہیں
نہ پوچھو کون ہیں کیا مدعا ہے کچھ نہیں بابا
گدا ہیں اور زیر سایۂ دیوار بیٹھے ہیں
یہ ہو سکتا نہیں آزادؔ سے مے خانہ خالی ہو
وہ دیکھو کون بیٹھا ہے وہی سرکار بیٹھے ہیں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔
یہ اک شان خدا ہے میں نہیں ہوں
وہی جلوہ نما ہے میں نہیں ہوں
زمانہ پہلے مجھ کو ڈھونڈتا ہے
مگر تیرا پتا ہے میں نہیں ہوں
ترے ہوتے مری ہستی کا کیا ذکر
یہی کہنا بجا ہے میں نہیں ہوں
صدائے نحن اقرب کہہ رہی ہے
کہ تو مجھ سے جدا ہے میں نہیں ہوں
وہ خود تشریف فرمائے جہاں ہیں
تمہیں دھوکا ہوا ہے میں نہیں ہوں
کہاں میں اور کہاں خبط انا الحق
کوئی میرے سوا ہے میں نہیں ہوں
مجھے آزادؔ دنیا کیوں نہ پوجے
کسی کا نقش پا ہے میں نہیں ہوں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ستم دوست فکر عداوت کہاں تک
کہاں تک وفا سے بغاوت کہاں تک
خلاف سلوک محبت کے خوگر
خلاف سلوک محبت کہاں تک
مسلسل ستم کی حکومت کے بانی
مسلسل ستم کی حکومت کہاں تک
اٹھو درد کی جستجو کر کے دیکھیں
تلاش سکون طبیعت کہاں تک
کبھی حکم پیر مغاں بھی بجا لا
فقط اتباع شریعت کہاں تک
کبھی کچھ نتیجہ نکالو تو جانیں
فقط خبط معلوم و علت کہاں تک
یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
Share on facebook
Share on twitter
Share on whatsapp
Share on telegram
Share on email
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ

اردوئے معلیٰ

پر

خوش آمدید!

گوشے

متعلقہ اشاعتیں

نامور شاعر ناصر زیدی کا یوم ِ وفات
نامور شاعر اور جاسوسی ناول نگار ابن صفی کا یوم پیدائش اور یوم وفات
معروف شاعر اور ڈرامہ نگار علی سردار جعفری کا یوم وفات
معروف ناول نگار اور سفرنامہ نگار کشمیری لال ذاکر کا یوم وفات
شاعر اور انشائیہ نگار ڈاکٹر وزیر آغا کا یومِ وفات
شاعر، ادیب اور ماہر تعلیم محسن احسان کا یوم پیدائش
معروف شاعر اثر بہرائچی کا یوم پیدائش
معروف شاعر ندا فاضلی کا یومِ وفات
ممتاز شاعرہ سارا شگفتہ کا یوم وفات
ممتاز افسانہ نگار سید قاسم محمود کا یومِ وفات